تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
وائرل ویڈیو میں کم سن بچّی پر تشدد کرنے والا فلسطینی باپ الریاض میں گرفتار
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 16 صفر 1441هـ - 16 اکتوبر 2019م
آخری اشاعت: پیر 23 محرم 1441هـ - 23 ستمبر 2019م KSA 01:17 - GMT 22:17
وائرل ویڈیو میں کم سن بچّی پر تشدد کرنے والا فلسطینی باپ الریاض میں گرفتار
کم سن بچی کو تشدد کا نشانہ بنانے کے الزام میں گرفتار ہونے والا فلسطینی شخص ۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ

سعودی پولیس نے دارالحکومت الریاض میں ایک کم سن بچّی کو ظالمانہ طریقے سے مارنے پیٹنے والے فلسطینی والد کو گرفتار کر لیا ہے۔

پولیس نے اتوار کو ایک بیان میں کہا ہے کہ ملزم کی شناخت فلسطینی مقیم کے طور پر ہوئی ہے اور اس کی عمر چالیس کے پیٹے میں ہے۔اس کو الریاض میں گرفتار کیا گیا ہے اور اس کے چار بچّوں کی متعلقہ حکام سے مل کر ضروری نگہداشت کی جارہی ہے۔

اس کی بچوں کو وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنانے کی ویڈیو ہفتے کے روز سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی۔اس میں اس شخص کو اپنی کم سن بیٹی کو اپنے پاؤں پر کھڑا نہ ہونے پر بار بار چہرے پر تھپڑ مارتے اور اس کے کان کھینچتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔

ایک اور ویڈیو میں وہ بچی سے اپنے اس سفاکانہ سلوک پر معافی مانگتاہے اور بتاتا ہے کہ اس کی بیوی دو ہفتے قبل اس کو اور اس کے چار بچّوں کو چھوڑ کر گھر سے چلی گئی تھی۔اس نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کی بیوی ہی نے بچی کو مارنے کی ویڈیو مذموم مقاصد کے لیے آن لائن شئیر کی تھی۔

اس ویڈیو پر سوشل میڈیا پر لوگوں نے سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے اور اس کو سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارموں پر شئیر کیا گیا ہے تاکہ بچوں کو تشدد کا نشانہ بنانے والے اس شخص کی شناخت ہوسکے اور اسی کی روشنی میں اس کی گرفتاری عمل میں آئی ہے۔

لبنانی اداکارہ ندین جیم نے اس ویڈیو پر آن لائن اپنے سخت غم وغصے کا اظہار کیا ہے۔ایک ٹویٹ میں وہ لکھتی ہیں:’’ میں اس ویڈیو کو آخر تک نہیں دیکھ سکی ہوں۔میں یونیسف اور حکومت سے اپیل کرتی ہوں کہ اس بچی کی مدد کی جائے اور اس کے باپ کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے۔‘‘

ایک اور صارف نے لکھا:’’میں نے ابھی ابھی ایک باپ کی اپنی بچوں کو مارتے ہوئے ویڈیو دیکھی ہے۔وجہ صرف یہ تھی کہ وہ اپنے پاؤں پر کھڑی نہیں ہورہی تھی۔یہ ویڈیو دیکھ کر میرا دل ٹوٹ گیا ہے۔بعض لوگ تو اس کوشش میں ہیں کہ ان کے بچے ہوں اوربعض دوسرے تو اس کے حق دار ہی نہیں کہ ان کے بچے ہوں۔یہ شخص کیسا سنگ دل ہے اور جس شخص نے یہ ویڈیو بنائی ہے،اس نے بھی کوئی اچھا نہیں کیا۔‘‘

ایک اور نے لکھا:’’ایک باپ کی اپنی چند ماہ کی عمر کی بچی کو مارتے ہوئے ویڈیو دیکھ کرمیرے تو رُونگٹے کھڑے ہوگئے۔میں اس کے سوا کچھ نہیں چاہتا کہ اس شخص کو سزائےموت دی جائے۔‘‘

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند