تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
شادی کی اجازت نہ ملنے پر شامی نوجوان کی محبوبہ سمیت خودکشی
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

منگل 1 رجب 1441هـ - 25 فروری 2020م
آخری اشاعت: بدھ 26 جمادی الاول 1441هـ - 22 جنوری 2020م KSA 08:03 - GMT 05:03
شادی کی اجازت نہ ملنے پر شامی نوجوان کی محبوبہ سمیت خودکشی
حنان کو شادی کے خواہش مند ’عاشق‘ نے بم دھماکا کر کے ہلاک کر دیا
لندن ۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ

شام میں ایک 23 سالہ نوجوان حافظ نزار ابو فخرنے اپنی پسند کی لڑکی سے شادی کی اجازت نہ ملنے پر لڑکی سمیت خود کو بم دھماکے میں ہلاک کردیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یہ واقعہ اردن کی سرحد سےمتصل شامی علاقے السویداء میں 'حفر اللحف' کے مام پر پیش آیا۔

تفصیلات کے مطابق حافظ نزار ابو فخر نے 22 سالہ لڑکی کے ساتھ شادی کے لیے اس کے اہل خانہ کو پیغام بھیجا مگر لڑکی کے والدین اس کی شادی کسی اور جگہ کرنا چاہتے تھے۔ جب کہ لڑکی بھی ابو فخر سے شادی کرنا چاہتی تھی۔

بائیس سالہ لڑکی حنان عبداللہ ابو فخر یونیورسٹی سے گھر لوٹ رہی تھی کہ راستے میں نزار ابو فخر نے اسے ملاقات کی۔ اس موقع پراس نے اپنے پاس موجود بم کا دھماکا کیا جس کے نتیجے میں دونوں موقع پر ہی ہلاک ہو گئے۔

اس علاقے میں یہ اس نوعیت کا دوسرا واقعہ ہے۔ ایک سال قبل السویداء گورنری میں رامی خذیفہ نامی ایک نوجوان الکفر کے مقام پر ولید صادق نامی شخص کے گھر میں خود کو دھماکے سے اڑا دیا تھا۔ انیس سالہ خذیفہ ایک سترہ سالہ لڑکی کے ساتھ شادی کرنا چاہتا تھا مگر لڑکی کے والدین نے اس اس کے ساتھ بیٹی کی شادی سے انکار کردیا جس پر اس نے لڑکی کے گھر میں جا کرخود کو دھماکے سے اڑا دیا تھا۔ دھماکے میں لڑکی کی والدہ بھی شدید زخمی ہوگئی تھیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند