تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
افغان صدر کا انتخاب، غیر ملکی خاتون صحافی ہلاک
دو لاکھ سکیورٹی اہلکار تعینات، دھاندلی اور بدامنی کا سخت خطرہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 8 شعبان 1441هـ - 2 اپریل 2020م
آخری اشاعت: جمعہ 3 جمادی الثانی 1435هـ - 4 اپریل 2014م KSA 15:17 - GMT 12:17
افغان صدر کا انتخاب، غیر ملکی خاتون صحافی ہلاک
دو لاکھ سکیورٹی اہلکار تعینات، دھاندلی اور بدامنی کا سخت خطرہ
کابل ۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ

افغانستان میں صدارتی انتخابات کیلیے غیر معمولی سکیورٹی انتظامات کے باوجود انتخابی کوریج کیلیے آنے والی غیر ملکی صحافیوں پر حملے میں ایک ہلاک جبکہ دوسری شدید زخمی ہو گئی ہے۔ مسلح افراد نے یہ کارروائی افغانستان کے مشرقی صوبے خوست میں کی ہے۔

معلوم ہوا ہے کہ انتخابی کوریج کیلیے آنے والوں کی تاک میں افراد نے پولیس کا یونیفارم پہن رکھا تھا اور انہوں نے آنافانا صحافیوں پر فائر کھول دیا۔ جس کے نتیجے میں ایک خاتون صحافی ہلاک اور ایک شدید زخمی ہو گئی۔

ہفتے کے روز ہونے والے صدارتی انتخابات کیلیے پورے ملک میں غیر معمولی حفاظتی انتظامات کیے گئے ہیں۔ ایک اطلاع کے مطابق کم از کم دو لاکھ سکیورٹی اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔ سکیورٹی اہکاروں کی یہ تعیناتی پولنگ سے متعلقہ دفاتر، پولنگ سٹیشنوں، سرکاری دفاتر، فوجی اڈوں اور بڑے ہوٹلوں کے باہر بطور خاص کی گئی ہے۔

پولنگ سٹیشنوں پر پولیس اور فوج دونوں کی مدد لی گئی ہے اور پولنگ کے مراکز کی حفاطت کیلیے کئی حفاظتی حصار قائم کیے گئے ہیں۔ دوسری جانب طالبان نے صدارتی انتخابات کو ہر صورت نشانہ بنانے کا اعلان کر رکھا ہے۔ وہ اس سے پہلے حالیہ دنوں میں سرینا ہوٹل اور الیکشن کمیشن کے دفتر کو بھی اپنے حملوں کی زد میں لے چکے ہیں۔

افغانستان میں یہ پہلے باضابطہ صدارتی انتخابات ہیں، جن کے بارے دھاندلی اور بدامنی کی پہلے سے پیش گوئی چلی آرہی ہے۔ صدر حامد کرزئی دو مرتبہ صدر بننے کی وجہ سے امیدوار کے طور پر میدان میں نہیں ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند