تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
امل کلونی کا تیس سال پرانا لباس پریشانی کا باعث کیوں بنا؟
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

پیر 18 ربیع الثانی 1441هـ - 16 دسمبر 2019م
آخری اشاعت: ہفتہ 5 شعبان 1439هـ - 21 اپریل 2018م KSA 08:26 - GMT 05:26
امل کلونی کا تیس سال پرانا لباس پریشانی کا باعث کیوں بنا؟
العربیہ ڈاٹ نیٹ ۔ رانیا لوما

ہالی وڈ کی سپر اسٹار اور انسانی حقوق کی مندوبہ امریکی اداکار جارج کلونی کی اہلیہ امل علم الدین اپنی اداکاری اور انسانی حقوق کے خدمات انجام دینے کے ساتھ اپنے لباس کے حوالے سے بھی مداحوں کی توجہ کا مرکز رہتی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حال ہی میں انہوں نے نئے فیشن جریدے ’گلیمر‘ کی چیف ایڈیٹر سمانٹا پارے کی زیر نگرانی نیویارک میں ہونے والی ایک تقریب میں شرکت کی۔ اس تقریب میں انہوں نے جریدہ ’فوگ‘ کی چیف ایڈیٹر آنا ونٹور کی دعوت پر لال رنگ کی لیس کا آج سے تیس سال قبل ڈیزائن کردہ سوٹ پہنا۔

یہ سوٹ آج سے تیس سال قبل فرانسیسی ڈیزائنر ’Isabelle Allard‘ نے ڈٰیزائن کیا تھا جس پر اس کے اپنے دستخط بھی ثبت ہیں۔

کسی نئی تقریب میں پرانے دور کے ڈیزائن کا انتخاب امل کلونی کے مداحوں میں تنازع کا باعث بننا تھا، سو ایسا ہی ہوا۔ بعض نے اسے انسانی حقوق کی علم دار شخصیت کے لیے نا مناسب خیال کیا اور بعض مداحوں نے اسے بہت پسند بھی کیا۔

خود امل کلونی نے تسلیم کیا کہ اسےعالمی ذرائع ابلاغ اور مداحوں کی طرف سے اپنے لباس کے معاملے میں ناشائستہ رویے کا سامنا ہے۔ ایک تقریب میں انہوں نے کہا کہ لوگ میرے لباس اور اس کی خوبصورتی پر میری انسانی حقوق کے لیے خدمات سے زیادہ دیتے ہیں اور انسانی حقوق کے باب میں اس کی خدمات کو ملحوظ خاطر کم ہی رکھا جاتا ہے۔

ناقدین میں سے بعض نے استفسار کیا کہ ہے انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے کارکنان کو کیا ایسا شوخ لباس زیب تن کرنا چاہیے۔ امل کلونی کو ایسے چست اور بھڑکیلے لباس کا انتخاب نہیں کرنا چاہیے۔

سرخ رنگ کی ’توپ‘ کہلانے والے سوٹ کو کراس شکل میں تیار کیا گیا جس کے پیچھے ایک طویل دم اور سیاہ رنگ کی شلوار، اونچی ایڑی والی چمڑے کی سیاہ جوتی اور ہاتھ میں ایک وینٹاج ماڈل کا پاؤچ نمایاں دیکھے جاسکتے ہیں۔ فیشن شو کے موقع پر پہنے اس لباس کے باعث امل کلونی کو سخت تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے تیس سال پرانا لباس کو منتخب کیا مگر یہ ان کے لیے پریشانی کا باعث بنا ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند