تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
امریکا میں ’شٹ ڈاؤن‘15 فروری تک ختم، کاروبار ریاست دوبارہ رواں
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 15 ذیعقدہ 1440هـ - 18 جولائی 2019م
آخری اشاعت: ہفتہ 19 جمادی الاول 1440هـ - 26 جنوری 2019م KSA 07:42 - GMT 04:42
امریکا میں ’شٹ ڈاؤن‘15 فروری تک ختم، کاروبار ریاست دوبارہ رواں
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ
ایجنسیاں

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ملک میں بڑھتے ہوئے بحران اور ڈیموکریٹس کی جانب سے سخت دباؤ کی مزید تاب نہ لا تے ہوئے امریکی تاریخ کے طویل ترین 'شٹ ڈاؤن' کے خاتمے کا اعلان کردیا ہے۔

پنتیس 35 دن تک جاری رہنے والے شٹ ڈاؤن کے بعد صدر ٹرمپ نے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ وہ تین ہفتے تک کے لیے سرکاری محکموں اور اداروں کی فنڈنگ کا سلسلہ دوبارہ شروع کر رہے ہیں لیکن اس میں صدر ٹرمپ کی خواہشات کے برعکس امریکا اور میکسیکو کی سرحد پر دیوار کے قیام کے لیے رقم مختص نہیں کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ شٹ ڈاؤن کی مرکزی وجہ اسی دیوار کے لیے فنڈنگ کا حصول ہے جس کے لیے صدر ٹرمپ نے کہا کہ وہ صرف اور صرف اُسی صورت میں بجٹ کی منظوری دیں گے جب اُس میں دیوار کی تعمیر کے لیے 5.7 ارب ڈالر کی رقم مختص کی جائے۔

لیکن صدر ٹرمپ کے مطالبے پر حریف جماعت ڈیموکریٹس ڈٹ گئے رقم مختص کرنے سے انکار کر دیا۔

شٹ ڈاؤن کے خاتمے کے صدر ٹرمپ کے اعلان کے بعد ایوان کے دونوں حصوں میں بل منظور کر لیا گیا جس کی مدد سے شٹ ڈاؤن کم از کم 15 فروری تک کے لیے ختم ہو گیا ہے۔

وائٹ ہاؤس کے روز گارڈن سے خطاب کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ وہ اس اعلان پر بہت فخر محسوس کرتے ہیں اور انھوں نے ساتھ میں سرکاری ملازمین کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے انھیں 'زبردست محب وطن' قرار دیا اور کہا کہ انھیں تمام تنخواہ پوری ملے گی۔

لیکن اس تقریر میں صدر ٹرمپ نے ساتھ ساتھ یہ بھی کہا کہ وہ ابھی کے لیے 'بہت طاقتور متبادل راستہ' اختیار نہیں کر رہے جو ان کے پاس موجود ہے، یعنی ملک بھر میں ایمرجنسی نافذ کرنے کا اعلان۔

اگر امریکا میں ایمرجنسی نافذ ہو جاتی ہے تو اس کی مدد سے صدر ٹرمپ ملک کی افواج کو دیے جانے والی رقم کے کچھ حصے دیوار کی تعمیر میں مختص کر سکتے ہیں البتہ ایسا کرنے میں قانونی رکاوٹیں ہیں۔

صدر ٹرمپ نے کہا کہ ان کے پاس کوئی چارہ نہیں ہے ماسوائے دیوار بنانے کے اور اگر انھیں دیوار بنانے کے لیے کانگریس سے مطلوبہ مدد نہ مل سکی تو اس صورت میں دوبارہ شٹ ڈاؤن ہو جائے گا یا میں وہ راستہ اختیار کروں گا جو اس ایمرجنسی سے نمٹنے کے لیے آئین اور قانون نے مجھے دیا ہے۔'

خبر رساں ادارے رائٹرز نے امریکی انتظامیہ کے ایک اہلکار کے حوالے سے بتایا کہ صدر ٹرمپ شٹ ڈاؤن ختم کرنے پر اس لیے راضی ہوئے کیونکہ اس کی وجہ سے ملک بھر میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی مشکلات میں اضافہ ہو رہا تھا۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند