تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
بارودی ٹکڑے اورمقناطیس، خلیج میں جاپانی ٹینکر پرحملے کا ایران کی طرف اشارہ :امریکی بحریہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 17 ذیعقدہ 1440هـ - 20 جولائی 2019م
آخری اشاعت: بدھ 15 شوال 1440هـ - 19 جون 2019م KSA 18:47 - GMT 15:47
بارودی ٹکڑے اورمقناطیس، خلیج میں جاپانی ٹینکر پرحملے کا ایران کی طرف اشارہ :امریکی بحریہ
13جون کو جاپان کے ملکیتی کوکوکا کورجیئس کو خلیج عُمان میں آبنائے ہُرمز کے نزدیک بین الاقوامی پانیوں میں تخریبی حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا۔
فجیرہ ۔ ایجنسیاں

امریکا کی بحریہ نے آبی بم کے ٹکڑوں اور ایک مقناطیس کی امارات فجیرہ میں ایک فوجی اڈے پر نمائش کی ہے اور کہا ہے کہ اس نے انھیں گذشتہ جمعرات کو خلیج عُمان میں تخریبی حملے کا نشانہ بننے والے ایک تیل بردار بحری جہاز سے اتارا تھا۔اس کاکہنا ہے کہ اس جہاز پر چسپاں کردہ بارودی سرنگ ایرانی ساختہ بارودی سرنگوں سے مشابہ ہے۔

امریکی فوج نے قبل ازیں گذشتہ سوموار کو جاپان کے ملکیتی ٹینکر کوکوکا کورجیئس سے ایرانی پاسداران انقلاب کی ایک نہ پھٹنے والی بارودی سرنگ کو ہٹاتے ہوئے تصاویر جاری کی تھیں۔اس جہاز میں 13 جون کو دھماکا ہوا تھا اور اس کے ساتھ ناروے کے ملکیتی فرنٹ آلٹیر کو حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

امریکاکی بحری افواج کی مرکزی کمان کے ایک ٹاسک گروپ کے کمانڈنگ آفیسر سیان کِڈو نے بدھ کو بتایا ہے کہ ’’حملے میں استعمال کی گئی بارودی سرنگیں بہت منفرد ہیں اور یہ ان ایرانی بارودی سرنگوں سے بڑی مشابہت رکھتی ہیں جن کی ماضی میں ایران کی فوجی پریڈوں میں نمائش کی جاتی رہی ہے‘‘۔

وہ متحدہ عرب امارات کی بندرگاہ فجیرہ کے نزدیک امریکی بحریہ کے ایک اڈے پر صحافیوں سے گفتگو کررہے تھے۔انھوں نے صحافیوں کو جاپانی تیل بردار جہاز کوکوکا کورجیئس سے ہٹائے گئے بارودی سرنگ کے ٹکڑے اور ایک مقناطیس دکھایاہے۔یہ مبیّنہ طور پر پاسداران انقلاب ایران کی ایک ٹیم جہاز کے ساتھ چپکا کر گئی تھی اور ان کی ویڈیو بھی بن گئی تھی۔

کوکوکا کورجئیس کی ملکیتی جاپانی کمپنی کا کہنا ہے کہ اس کے جہاز کو دو ’’اڑتے ہوئے عناصر‘‘ سے نقصان پہنچا تھا لیکن امریکی بحریہ کی مرکزی کمان نے اس کے اس موقف کو مسترد کردیا ہے۔

امریکی بحریہ کے افسر کِڈو کا کہنا تھا کہ دھماکے سے ہونے والا سوراخ اور نقصان چپکائی گئی بارودی سرنگ سے حملے کا ہے۔یہ کسی بیرونی اڑتے ہوئے عنصر کے جہاز سے ٹکرانے کا نتیجہ نہیں ہے۔نیز عقبی حصے کے سوراخ واضح نظر آرہے ہیں اور ان سے صاف پتا چل رہا ہے کہ بارودی سرنگیں جہاز کے ساتھ کیسے چسپاں کی گئی تھیں۔

گذشتہ جمعرات کو دو آئیل ٹینکروں ناروے کے ملکیتی فرنٹ آلٹیر اور جاپان کے ملکیتی کوکوکا کورجیئس کو خلیج عُمان میں آبنائے ہُرمز کے نزدیک بین الاقوامی پانیوں میں تخریبی حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا۔موخرالذکر بحری جہاز پر آتش گیر مواد میتھانول لدا ہوا تھا اور اس کے پچھلے حصے میں بارودی سرنگ کا دھماکا ہوا تھا ۔تاہم اس میں لدا آتش گیر مواد محفوظ رہا تھا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور دوسرے عہدے داروں نے ایران کو اس حملے کا مورد الزام ٹھہرایا تھا اور کہا تھا کہ اس کارروائی میں ہر طرح سے ایران کا ہاتھ کارفرما ہے لیکن ایران نے اس الزام کی تردید کی تھی ۔امریکی محکمہ دفاع پینٹاگان نے سوموار کو اس حملے سے متعلق تصاویر جاری کی تھیں ۔ان سے یہ ظاہر ہوتا تھا کہ ایران دو میں سے ایک بحری جہاز پر حملے میں ملوّث تھا۔

گذشتہ ماہ تین آئیل ٹینکروں سمیت چار بحری جہازوں پر متحدہ عرب امارات کی ساحلی حدود میں خلیج عُمان ہی میں حملہ کیا گیا تھا۔امریکا نے اس حملے کا الزام بھی ایران پر عاید کیا تھا لیکن اس نے اس حملے کی ذمے داری قبول کرنے سے انکار کیا تھا۔

  • جاپانی تیل بردار جہاز کوکوکا کورجیئس سے اتارے گئے بارودی سرنگ کے ٹکڑے اور ایک مقناطیس

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند