تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
امریکا کی سعودی عرب کی سکیورٹی کے تحفظ کے لیے مدد کی پیش کش
صدر ٹرمپ کی سعودی ولی عہد شہزادہ محمد سے آرامکو کی تنصیبات پر ڈرون حملوں کے بعد فون پر بات چیت
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 19 صفر 1441هـ - 19 اکتوبر 2019م
آخری اشاعت: اتوار 15 محرم 1441هـ - 15 ستمبر 2019م KSA 23:18 - GMT 20:18
امریکا کی سعودی عرب کی سکیورٹی کے تحفظ کے لیے مدد کی پیش کش
صدر ٹرمپ کی سعودی ولی عہد شہزادہ محمد سے آرامکو کی تنصیبات پر ڈرون حملوں کے بعد فون پر بات چیت
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ۔ فائل تصویر
العربیہ ڈاٹ نیٹ

امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سعودی عرب میں تیل کی دو تنصیبات پر ڈرون حملوں کے بعد ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے۔

سعودی پریس ایجنسی (ایس پی اے) کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق صدر ٹرمپ نے فون پر گفتگو میں کہا کہ امریکا سعودی عرب کی سلامتی اور استحکام میں مددینے کو تیار ہے۔

انھوں نے سعودی آرامکو کی تیل کی دو تنصیبات پر دہشت گردی کے حملوں کے امریکی اور عالمی معیشت پر مرتب ہونے والے منفی اثرات کو اجاگر کیا۔

ایس پی اے کے مطابق سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے امریکی صدر کی پیش کش کے جواب میں کہا کہ ’’ مملکت اس طرح کی دہشت گردانہ جارحیت سے نمٹنے کی صلاحیت اور عزم رکھتی ہے۔‘‘

یمن کے حوثی شیعہ باغیوں نے سعودی آرامکو کی تیل کی دو تنصیبات کو ڈرون حملوں میں نشانہ بنایا ہے۔ سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے مطابق ہفتے کو علی الصباح چار بجے ان ڈرون حملوں کے نتیجے میں ان دو تنصیبات میں آگ لگ گئی تھی اور اس آگ پر قابو پایا جاچکا ہے۔

ان میں ایک تنصیب مملکت کے مشرقی صوبے میں الدمام شہر کے نزدیک واقع علاقے بقیق میں ہے اور دوسری تنصیب ہجرۃ خريص آئل فیلڈ میں واقع ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند