تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
ایردوآن کُردوں کے خلاف اسرائیلی ٹینکوں کا استعمال کر رہے ہیں : رپورٹ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 7 ربیع الثانی 1441هـ - 5 دسمبر 2019م
آخری اشاعت: جمعرات 17 صفر 1441هـ - 17 اکتوبر 2019م KSA 12:02 - GMT 09:02
ایردوآن کُردوں کے خلاف اسرائیلی ٹینکوں کا استعمال کر رہے ہیں : رپورٹ
واشنگٹن - بندر الدوشی

ترکی شمالی شام میں حملے اور کردوں کو ہلاک کرنے کے لیے جن ٹینکوں کا استعمال کر رہا ہے انہیں کروڑوں ڈالر کے عسکری سمجھوتے کے تحت اسرائیل میں اپ گریڈ کیا گیا۔ یہ بات اسرائیلی اخبار The Jerusalem Post نے اپنی ایک رپورٹ میں بتائی ہے۔

اخبار کی رپورٹ کے مطابق شمالی شام میں کردوں کے خلاف حملے میں ترکی کی جانب سے M60-A1 ٹینکوں کا استعمال کیا جا رہا ہے جن کو اسرائیل نے اپ گریڈ کیا ہے۔

اخبار کا کہنا ہے کہ ترکی کے آپریشن کے دوران سرحدی قصبے اكشاكالی کے نزدیک لی گئی تصاویر میں واضح طور پرM-60 ماڈل کے فوجی ٹینک دیکھے جا سکتے ہیں۔

اسرائیلی اخبار نے بتایا ہے کہ M60-A1 ٹینک کے تمام مرکزی سسٹم کو تبدیل کر دیا گیا ہے۔ یہ ٹینک گذشتہ صدی کی 1960ء کی دہائی میں اصل میں امریکا میں بنائے گئے تھے۔ اسرائیلی فوج نے 68.7 کروڑ ڈالر کی لاگت سے انہیں جدید بنا کر اپنے استعمال کے واسطے شامل کیا۔

یروشلم پوسٹ کے مطابق ترکی اور اسرائیل 1960ء کی دہائی سے دفاعی صنعت، سیکورٹی تعاون، انٹیلی جنس معلومات کے تبادلے اور عسکری تربیت کے شعبوں میں قریبی حلیف رہے ہیں۔ یہ قربت 1994 میں دفاعی تعاون اور 1996 میں عسکری تعاون سے متعلق سمجھوتوں کے ذریعے عروج پر پہنچ گئی۔

مذکورہ دونوں معاہدوں کے بعد ترکی اور اسرائیل کے بیچ عسکری اور سیکورٹی تعلقات مشرق وسطی میں مضبوط ترین نوعیت کے روابط میں شمار ہونے لگے۔ اسرائیل نے کردستان ورکرز پارٹی (PKK) کے خلاف جاری ترکی کی کارروائی میں انقرہ کو انٹیلی جنس معلومات فراہم کیں۔ اس کے مقابل انقرہ نے ایران کے حوالے سے اکٹھا کی جانے والی معلومات اسرائیلی انٹیلی جنس کو پیش کر دیں۔

ترکی ہمیشہ اسرائیل کے ہتھیاروں کا ایک مرکزی خریدار رہا ہے۔ اسرائیلی کمپنیوں نے 1 ارب ڈالر میں ترکی کے لیےF-4E طیارے اپ گریڈ کیے اور 20 کروڑ ڈالر کی قیمت میں ترکی کو ہتھیاروں سے لیس ہیرون طیارے بھی فراہم کیے۔ اس کے علاوہ 20 کروڑ ڈالر کا نگرانی کا نظام اور 15 کروڑ ڈالر کے عوض جدید میزائل سسٹم اور Smart Ammunition بھی شامل ہے۔

اسی طرح اسرائیل اور ترکی کے درمیان ایک بڑے دفاعی سمجھوتے کے تحتM60-A1 ٹینکوں کو اپ گریڈ کیا گیا۔ اس سمجھوتے میں اسرائیل کی جانب سے ترکی کوArrow میزائل دفاعی سسٹم اور Merkava ٹینکوں کی فروخت بھی شامل ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند