تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
تُرکی کے وفادار 1000 شامی اجرتی قاتل لیبیا پہنچ گئے
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 25 ذوالحجہ 1441هـ - 15 اگست 2020م
آخری اشاعت: پیر 10 جمادی الاول 1441هـ - 6 جنوری 2020م KSA 07:19 - GMT 04:19
تُرکی کے وفادار 1000 شامی اجرتی قاتل لیبیا پہنچ گئے
دبئی ۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ

شام میں انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے گروپ 'سیرین آبز ویٹری' کی رپورٹ کے مطابق ترکی کی وفادار ایک ہزار شامی جنگجو لڑائی میں حصہ لینے اور قومی وفاق حکومت کی مدد کے لیے لیبیا پہنچ گئے ہیں۔

سیرین آبزرویٹری کے مطابق شام سے تعلق رکھنے والے جنگجوئوں کی بڑے پیمانے پر بھرتیاں جاری ہیں اور اس وقت 1700 شامی جنگجوترکی کےہاں زیرتربیت ہیں۔ انہیں جلد ہی لیبیا بھیجے جانے کے امکانات ہیں۔ یہ جنگجو عفرین اور 'فرات کی ڈھال' آپریشن والے علاقوں سے بھرتی کیے گئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق طرابلس میں لڑائی کے دوران ایک شامی جنگجو کے مارے جانے کی اطلاعات ہیں۔ مقتول جنگجو'سلطان مراد' نامی عسکری گروپ میں شامل تھا اور اسے حال ہی میں لیبیا میں لڑائی کے لیے بھیجا گیا تھا۔

تاہم 'سلطان مراد' ملیشیا کی طرف سے اپنے کسی جنگجو کی ہلاکت کی تصدیق نہیں کی گئی۔

قبل ازیں سیرین آبزر ویٹری نے اطلاع دی تھی کہ ترکی میں قائم عسکری تربیتی مراکز میں شام سے 1600 جنگجو بھرتی کے لیے پہنچ چکے ہیں جب کہ مزید کی آمد بھی جاری ہے۔ ان میں سلطان مراد، سلیمان شاہ اور المعتصم بریگیڈ ملیشیائوں کے جنگجو شامل ہیں۔

ان اجرتی قاتلوں کو عفرین کے علاقوں سے باقاعدی رجسٹریشن کرکے وہاں سے ترکی لایا جاتا ہے۔

گذشتہ روز لیبی فوج کے ترجمان میجرجنرل احمد المسماری نے کہا کہ غیر مُلکی اجرتی قاتلوں کے خلاف لڑائی میں فوج اور قوم متحد ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند