تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
تہران طیارہ حادثہ: متاثرہ اقوام کا ایران سے سوگوار خاندانوں کومعاوضہ دینے کا مطالبہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 2 رجب 1441هـ - 26 فروری 2020م
آخری اشاعت: جمعرات 20 جمادی الاول 1441هـ - 16 جنوری 2020م KSA 20:07 - GMT 17:07
تہران طیارہ حادثہ: متاثرہ اقوام کا ایران سے سوگوار خاندانوں کومعاوضہ دینے کا مطالبہ
کینیڈا ، یوکرین ، سویڈن ، افغانستان اور برطانیہ کے وزرائے خارجہ لندن میں جمعرات کو ایک مشترکہ نیوزکانفرنس کررہے ہیں۔
لندن ۔ ایجنسیاں

ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کے میزائل حملے میں بدھ آٹھ جنوری کو تباہ شدہ یوکرین کے مسافر طیارے کے واقعے سے متاثرہ پانچ ممالک نے روحانی حکومت سے سوگوار خاندانوں کو معاوضہ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

کینیڈا ، یوکرین ، سویڈن ، افغانستان اور برطانیہ کے وزرائے خارجہ نے جمعرات کو لندن میں ملاقات کے بعد ایک مشترکہ نیوز کانفرنس کی ہے اوراس میں ایران سے مطالبہ کیا ہے کہ مسافر طیارے کی تباہی کے واقعے کی آزادانہ ، شفاف اور مکمل بین الاقوامی تحقیقات کرائی جائیں اور اس کے بارے میں متاثرہ اقوام کو بھی تمام دستیاب معلومات سے آگاہ کیا جائے۔

ان ممالک نے ایران کی جانب سے اب تک کی تحقیقات کا خیرمقدم کیا ہے۔

گذشتہ بدھ کو یوکرین انٹرنیشنل ائیرلائنز کا بوئنگ 737-800 تہران کے امام خمینی ہوائی اڈے سے اڑان بھرنے کے تھوڑی دیر بعد میزائل لگنے سے تباہ ہو گیا تھا۔یہ مسافر طیارہ یوکرین کے دارالحکومت کیف جارہا تھا اور اس میں سوار تمام 176 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

ان مہلوکین میں 57 ایرانی نژاد کینیڈین شہری تھے۔ان سمیت 138 مسافر کینیڈا جارہے تھے۔11 مہلوکین کا تعلق یوکرین سے تھا۔17 سویڈن کے شہری تھے، چار افغان اور چار برطانوی شہری تھے اور باقی تمام ایرانی تھے۔

ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کی فضائی فورس نے گذشتہ ہفتے کے روز یوکرین کے مسافر طیارے کو مارگرانے کا اعتراف کیا تھا اور کہا تھا کہ اس کے ایک آپریٹر نے غلطی سے اس طیارے کوکروز میزائل سمجھ لیا تھا اوراس پرمیزائل داغ دیا تھا۔

پاسداران انقلاب کی فضائی فورس کے سینیر کمانڈر امیر علی حاجی زادہ نے اس انسانی غلطی پر معذرت کی تھی۔ پاسداران انقلاب کی اس سنگین غلطی کے خلاف تہران اور دوسرے شہروں میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے ہیں اور مظاہرین نے واقعے کے ذمے داروں کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند