تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
لبنان میں امریکیوں کی گرفتاری میں ملوث ذمے داران کی سزا کے لیے امریکی قانون کا بِل
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 14 شعبان 1441هـ - 8 اپریل 2020م
آخری اشاعت: بدھ 2 رجب 1441هـ - 26 فروری 2020م KSA 10:03 - GMT 07:03
لبنان میں امریکیوں کی گرفتاری میں ملوث ذمے داران کی سزا کے لیے امریکی قانون کا بِل
واشنگٹن – بیئر غانم

امریکی سینیٹ کی خاتون رکن جین شاہین اور ان کے ساتھی ٹیڈ کروز نے ایک نئے قانون کا بل متعارف کرایا ہے۔ اس قانون کو "Zero Tolerance Act" کا نام دیا گیا ہے۔ اگر یہ قانون منظور ہو گیا تو اس کے ذریعے لبنانی حکومت کے اُن سرکاری ذمے داران پر پابندیاں عائد کی جا سکیں گی جو لبنان میں امریکی شہریوں کے خلاف غیر قانونی حراست اور گرفتاری میں ملوث ہیں۔

سینیٹر ٹیڈ کروز کے دفتر کی طرف سے جاری ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ مذکورہ قانونی بل لبنانی ذمے داران کی جانب سے امریکی شہری عامر فاخوری کی رہائی مسترد کرنے کے جواب میں سامنے آیا ہے۔ فاخوری امریکی ریاست نیوہیمشائر کے شہر ڈوور میں مقیم ہے۔ بیان کے مطابق ستمبر 2019 میں غیر قانونی طور پر گرفتار کیا جانے والا فاخوری چوتھے مرحلے کے سرطان کے مرض میں مبتلا ہے۔

لبنانی عدلیہ کی جانب سے عائد الزامات میں کہا گیا ہے کہ فاخوری نے جن جرائم کا ارتکاب کیا ہے وہ جنگی جرائم اور انسانیت کے خلاف جرائم تک پہنچے ہوئے ہیں۔ یہ الزامات وقت گزرنے کے ساتھ ساقط نہیں ہو جاتے۔ اس کے علاوہ فاخوری پر الزام ہے کہ اس نے سال 2000 میں لبنان سے اسرائیلی انخلاء کے بعد بھی اسرائیلی دشمن کے ساتھ معاملات رکھے۔

امریکی ذمے داران کے مطابق لبنانی عدلیہ کی جانب سے فاخوری پر عائد الزامات درست نہیں ہیں اور لبنانی ملیشیا حزب اللہ فرقہ وارانہ اور سیاسی کشیدگی بڑھانے کے واسطے اس معاملے سے فائدہ اٹھا رہی ہے۔

سینیٹ میں متعارف کرائے جانے والے نئے قانونی بل کے متن میں امریکی وزیر خارجہ سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ لبنان میں صرف فاخوری نہیں بلکہ تمام امریکیوں کی گرفتاری کے ذمے دار سرکاری عہدے داران کی فہرست تیار کی جائے۔ ان افراد کو امریکا میں داخل ہونے کا ویزہ حاصل کرنے سے روک دیا جائے اور ان افراد کے اہل خانہ اور معاونین کے لیے بھی امریکی ویزے پر پابندی لگا دی جائے۔

قانونی بل کے اس پیراگراف کے ضمن میں درجنوں افراد کو شامل کیا جا سکتا ہے۔ اس لیے کہ ٹیڈ کروز اور جین شاہین کی جانب سے پیش کیے جانے والے بل میں لبنان میں عدلیہ، مسلح افواج، سیکورٹی فورسز اور حکومت کے تمام موجودہ اور سابقہ ارکان کو شامل کیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ قانونی بل یہ مطالبہ کرتا ہے کہ امریکی وزیر خارجہ کی وضع کردہ فہرست میں شامل تمام افراد کے امریکا میں مالی اثاثوں کو منجمد کر دیا جائے۔

یہ بات واضح ہے کہ امریکی سینیٹ کے ارکان سفارتی حلقوں کے ذریعے لبنان میں عامر فاخوری کی رہائی کے حوالے سے نا امید ہو چکے ہیں۔ امریکیوں نے ایک سے زیادہ مرتبہ لبنانی ذمے داران کے ساتھ اس مسئلے پر بات چیت کی ہے تاہم وہ انہیں فاخوری کی رہائی پر قائل کرنے میں کامیاب نہ ہو سکے۔

ادھر ایران میں سابقہ گرفتار لبنانی نزار زکا کی جانب سے اس معاملے میں دل چسپی کا اظہار سامنے آیا ہے۔ نزار کا کہنا ہے کہ لبنانی ذمے داران اس معاملے میں کھلواڑ کر رہے ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند