تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
مہاتیر محمد پر کاری ضرب ... سابق وزیراعظم پارٹی سے باہر
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 5 ربیع الاول 1442هـ - 22 اکتوبر 2020م
آخری اشاعت: جمعہ 6 شوال 1441هـ - 29 مئی 2020م KSA 14:26 - GMT 11:26
مہاتیر محمد پر کاری ضرب ... سابق وزیراعظم پارٹی سے باہر
مہاتیر محمد
دبئی – العربیہ ڈاٹ نیٹ

ملائیشیا میں وزیراعظم محیی الدین یاسین کے زیر قیادت حکم راں جماعت نے سابق وزیراعظم مہاتیر محمد اور 4 دیگر ارکان کو پارٹی سے باہر نکال دیا ہے۔

اس سلسلے میں United Indigenous Party کی جانب سے جمعرات کو جاری بیان میں کہا گیا کہ مہاتیر محمد (94 سالہ) کی پارٹی رکنیت فوری طور پر منسوخ کر دی گئی ہے۔ بیان میں مزید بتایا گیا کہ مہاتیر جو کہ پارٹی چیئرمین تھے ان کے ساتھ چار دیگر ارکان پارلیمنٹ کو بھی پارٹی سے علاحدہ کیا گیا ہے۔

مہاتیر سمیت پانچوں ارکان پارلیمنٹ رواں ماہ 18 مئی کو ہونے والے  پارلیمنٹ کے ایک مختصر اجلاس میں اپوزیشن کی نشستوں پر منتقل ہو گئے تھے۔

حکم راں جماعت کے مطابق مہاتیر کی رکنیت خود ہی سے اس وقت ختم ہو گئی تھی جب انہوں نے محیی الدین یاسین کو بطور وزیر اعظم اور پارٹی سربراہ قبول کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

واضح رہے کہ یاسین جو مہاتیر کے ایک قابل اعتماد معاون تھے وہ رواں سال مارچ میں غیر متوقع طور پر وزیر اعظم کے طور پر منتخب ہو گئے۔ اس سے قبل انہوں نے سابق حکمراں جماعت کے ساتھ اتحاد تشکیل دیا تھا تا کہ پارلیمںٹ میں اکثریت کا حصول یقینی بنایا جا سکے۔

اُس موقع پر ملائیشیا کے بادشاہ سلطان عبداللہ سلطان احمد شاہ کا کہنا تھا کہ "ملک میں سیاسی عدم استحکام کی فضا جاری رہنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی لہذا وفاقی آئین کی روشنی میں یہ نظر آ رہا ہے کہ محیی الدین یاسین کو ارکان پارلیمںٹ کی اکثریت حاصل ہے اور وہ ملک کے آٹھویں وزیر اعظم کے طور پر مقرر کیے جانے کے اہل ہیں"۔

یہ آخری اقدام مہاتیر کی حکم رانی کا اختتام تھا۔ انہیں دو طرف سے سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ پہلا یہ کہ پارٹی کی سربراہی اور پھر رکنیت سے ہاتھ دھونا پڑے اور دوسرا یہ کہ ان کے حریف یاسین کو حکومت کی سربراہی سونپ دی گئی۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند