تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
مصری صدرالسیسی کی خلیفہ حفتر سے ملاقات،لیبیا میں جنگ بندی کے لیے’قاہرہ اقدام‘کا اعلان
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 5 ربیع الاول 1442هـ - 22 اکتوبر 2020م
آخری اشاعت: ہفتہ 14 شوال 1441هـ - 6 جون 2020م KSA 15:54 - GMT 12:54
مصری صدرالسیسی کی خلیفہ حفتر سے ملاقات،لیبیا میں جنگ بندی کے لیے’قاہرہ اقدام‘کا اعلان
لیبی قومی فوج (ایل این اے) کے سربراہ جنرل خلیفہ حفتر قاہرہ میں مصری صدر عبدالفتاح السیسی سے ملاقات کررہے ہیں۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ

مصر کے صدر عبدالفتاح السیسی نے لیبیا میں 8 جون سے جنگ بندی کے ایک منصوبہ کا اعلان کیا ہے۔

انھوں نے ہفتے کے روز لیبی قومی فوج (ایل این اے) کے سربراہ جنرل خلیفہ حفتر سے ملاقات کی ہے اور ان سے لیبیا کی تازہ صورت حال اور متحارب فریقوں کے درمیان جنگ بندی کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔صدر السیسی نے کہا کہ لیبیا کی سلامتی مصر کی سلامتی ہی کی توسیع ہے۔

خلیفہ حفتر کے زیر قیادت قومی فوج کی لیبیا کی اقوام متحدہ کی تسلیم شدہ قومی اتحاد کی حکومت کی فورسز سے طرابلس پر کنٹرول کے لیے گذشتہ کئی ماہ سے لڑائی ہورہی ہے۔

مصری صدر نے لیبیا میں جنگ بندی کے لیے سیاسی اقدام کو’’قاہرہ اقدام‘‘ کا نام دیا ہے اور کہا ہے کہ اس سے جنگ زدہ ملک میں معمولاتِ زندگی کی بحالی کی راہ ہموار ہوگی۔انھوں نے بحران کے حل کے لیے فوجی حربے استعمال کرنے پر خبردار کیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ لیبیا میں جاری بحران کو سیاسی طریقے سے ہی حل کیا جاسکتا ہے۔’’قاہرہ اقدام‘‘میں لیبیا میں اتحاد ویگانگت کی بحالی کے لیے ماضی میں کیے گئے تمام بین الاقوامی فیصلوں اور اقدامات کو سمویا جائے گا۔

صدر السیسی کا کہنا تھا کہ ’’لیبیا کے تمام فریقوں سے کہا گیا ہے کہ وہ جنگ بندی میں حصہ لیں اور جنگ بندی کی رہ نماہدایات کے تحت تمام غیرملکی جنگجوؤں کو لیبیا سے نکلنا ہوگا۔‘‘

انھوں نے اپنے تئیں اس اعتماد کا اظہار کیا ہے کہ ’’ایل این اے کے سربراہ جنرل حفتر اور مشرقی پارلیمان کے سربراہ عقیلہ صالح لیبی عوام کے بہترین مفادات کے تحفظ کے لیے پُرعزم ہیں۔‘‘

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند