تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
لبنانی سیاست دان بلا تاخیر حکومت تشکیل دیں: فرانس
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

پیر 9 ربیع الاول 1442هـ - 26 اکتوبر 2020م
آخری اشاعت: ہفتہ 1 صفر 1442هـ - 19 ستمبر 2020م KSA 13:09 - GMT 10:09
لبنانی سیاست دان بلا تاخیر حکومت تشکیل دیں: فرانس
دبئی ۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ

فرانس کی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ لبنان میں سیاسی جماعتوں کو چاہیے کہ وہ اپنی ذمے داری پوری کرتے ہوئے وزیر اعظم مصطفی ادیب کی سرپرستی میں فوری طور پر حکومت تشکیل دیں۔

فرانسیسی وزارت خارجہ کی ترجمان انییس وان ڈیئر مول نے جمعے کے روز ایک پریس بریفنگ میں کہا کہ "ایسے وقت میں جب کہ لبنان کو غیر معمولی نوعیت کے بحران کا سامنا ہے ،،، فرانس کو افسوس ہے کہ لبنانی سیاست دان اپنے اُن وعدوں کو پورا نہیں کر رہے ہیں جن کا انہوں نے یکم ستمبر کو ٹائم فریم کے سلسلے میں اعلان کیا تھا"۔

ترجمان نے مزید کہا کہ "ہم تمام لبنانی سیاسی قوتوں پر زور دیتے ہیں کہ وہ اپنی ذمے داریاں پوری کریں اور مصطفی ادیب کی جانب سے نامزد حکومتی تشکیل کی بنا تاخیر منظوری دیں۔ ایسی حکومت جو مطلوبہ اصلاحات پر عمل درامد کی قدرت رکھتی ہو اور لبنانی عوام کی امیدوں کو پورا کر سکے"۔

دوسری جانب لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ اور اس کے حلیف لبنانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نبیہ بری کی جانب سے ہٹ دھرمی کا سلسلہ جاری ہے۔ اس کے سبب لبنان کے نامزد وزیر اعظم مصطفی ادیب جمعرات کی شام کابینہ کی تشکیل کے حوالے سے مشاورت کی توسیع پر مجبور ہو گئے۔

مصطفی ادیب نے اعلان کیا ہے کہ وہ نئی حکومت کی تشکیل کی مشاورت کے لیے مزید وقت دیں گے۔

فرانس اس وقت لبنان میں فرقہ واریت کی بنیاد پر تقسیم سیاسی رہ نماؤں پر دباؤ ڈال رہا ہے تا کہ جلد از جلد حکومت تشکیل دیے جانے کے بعد اصلاحات پر عمل درامد کا آغاز ہو۔ اس طرح لبنان کو 1975ء سے 1990ء تک جاری رہنے والی خانہ جنگی کے بعد ملکی تاریخ کے بدترین اقتصادی بحران سے نکالا جا سکے۔

یاد رہے کہ حکومتی تشکیل کا عمل حزب اللہ اور نبیہ بری کے سبب رکاوٹ کا شکار ہو گیا جن کا اصرار ہے کہ انہیں وزارت خزانہ دی جائے۔ اس سے قبل کئی سیاسی جماعتوں کے ذرائع بتا چکے ہیں کہ اسپیکر نبیہ بری کے ایک قریبی معاون پر بدعنوانی کے الزام کے تحت گذشتہ ہفتے واشنگٹن کی جانب سے پابندیاں عائد کیے جانے کے بعد سے اسپیکر کا اصرار زور پکڑ گیا ہے کہ وہ وزیر خزانہ نامزد کریں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند