تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
قبرص کی حدود میں غیر قانونی کھدائی پر ترکی کو یورپی پابندیوں کا سامنا
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 15 ذوالحجہ 1440هـ - 17 اگست 2019م
آخری اشاعت: منگل 13 ذیعقدہ 1440هـ - 16 جولائی 2019م KSA 12:46 - GMT 09:46
قبرص کی حدود میں غیر قانونی کھدائی پر ترکی کو یورپی پابندیوں کا سامنا
العربیہ ڈاٹ نیٹ

یورپی یونین کے وزراء نے قبرص کی سمندری حدود میں ترکی کی جانب سے گیس کی تلاش کے لئے کھدائی پر انقرہ حکومت کے خلاف ابتدائی پابندیاں لگانے کی منظوری دے دی ہے۔

یورپی یونین کابینہ کے مطابق "ترکی نے غیر قانونی کھدائی جاری رکھی ہے جس کی وجہ سے فضائی نقل وحرکت کے معاہدے پر بات چیت روک دی گئی ہے جبکہ یورپین سرمایہ کاری بینک سے بھی ملک کو دئیے جانے والے قرضے پر نظر ثانی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ یورپی یونین نے ترکی کے اقدامات کے نتیجےمیں 2020ء تک دئیے جانے والے 146 ملین یورو مالیت کے فنڈز بھی روک دئیے گئے ہیں۔اس کے علاوہ کابینہ نے خبردار کیا کہ یورپی یونین کی ایگزیگیٹو برانچ ابھی مزید پابندیوں پر کام کر رہی ہے۔

ترک بحریہ کے جنگی جہازوں کے کڑے پہرے میں ترک مزدور قبرص کی سمندری حدود کے اندر گیس کے لئے کھدائی میں مصروف ہیں۔یورپی یونین بار ہا قبرص کے قدرتی ذخائر پر ترک قبضے کی کوششوں کو قبرص کی خود مختاری اور بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی قرار دے چکی ہے۔

یورپی یونین حکام نے گذشتہ ہفتے ترکی پر پابندیوں سے متعلق بحث ومباحثہ شروع کیا تھا۔بحیرہ روم کی حدود میں گیس کے ذخائر کی دریافت کے بعد قبرص اور ترکی کے درمیان ان ذخائر کی ملکیت پر تنازع چل رہا ہے۔

قبرص سیاسی تنازع کے نتیجے میں تقسیم کا شکار ہے. اس کا ایک حصہ جمہوریہ قبرص اور ترک فوج کے درمیان تقسیم ہے۔ ترک فوج نے 1974 میں قبرص کے کچھ علاقے پر قبضہ کر لیا تھا۔

گمان کیا جاتا ہے کہ قبرص اور ترکی کے درمیان 2017ء کو ہونے والے امن مذاکرات کی ناکامی کی وجہ سے بھی گیس کے ذخائر پر تنازع موجود ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند