تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
عراق کی معمر خواتین عازمین حج سعودی قیادت اور عوام کی تعریف میں رطب اللسان
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 15 ذوالحجہ 1440هـ - 17 اگست 2019م
آخری اشاعت: جمعرات 15 ذیعقدہ 1440هـ - 18 جولائی 2019م KSA 14:20 - GMT 11:20
عراق کی معمر خواتین عازمین حج سعودی قیادت اور عوام کی تعریف میں رطب اللسان
العربیہ ڈاٹ نیٹ ۔ محمد الحربی

ان دنوں دنیا بھر سے عازمین حج کی بری، بحری اور فضائی راستوں سے سعودی عرب آمد جاری ہے۔ سعودی عرب میں خُشکی کے راستوں سے داخل ہونے والے عازمین حج میں عراق کے شہری بھی شامل ہیں۔ سعودی عرب کی عراق سے متصل شمالی سرحد پر 'عرعر' کے مقام پر دو طرفہ آمد و رفت کے لیے گذرگاہ بنائی گئی ہے۔

عراق سے آنے والے عازمین حج اسی گذرگاہ سے گذر کر سعودی عرب میں داخل ہوتے ہیں۔ عراق سے آنے والی عمر رسیدہ عازمات حج سعودی عرب کی طرف سے حجاج کے لیے گئے اقدامات اور اُنہیں‌ دی گئی بے شمار سہولیات سے متاثر ہوئے بغیر نہیں رہ سکیں۔

عرعر گذرگاہ پر معمول کے طبی معائنے کے عمل سے گذرنے والی ایک عمرہ رسیدہ خاتون نے حجاج کے لیے دی گئی سہولیات پر سعودی حکومت اور عوام کی غیر معمولی تعریف کرتے ہوئے انتظامیہ کے تعاون کا شکریہ ادا کیا۔

انہوں نے عراقی لہجے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ سعودی قیادت اور عوام کی طرف سے تعاون بے مثل ہے۔ جب وہ گذرگاہ سے نکلنے لگیں تو شمالی علاقوں کے گورنر شہزادہ فیسل بن خالد بن سلطان نے ان خواتین عازمین حج کا استقبال کیا۔ اس موقع پر بھی سعودی خواتین مملکت کی طرف سے فراہم کی گئی سہولیات پر سعودی قیادت کی تعریف میں رطب اللسان تھیں۔

آنے والے دونوں میں عرعر گذرگاہ سے 24 ہزار عازمین حج سعودی عرب میں داخل ہوں گے۔ حالیہ ایام میں اس گذرگاہ پر سعودی انتظامیہ نے عازمین حج کی سہولیات کے لیے 10 بار اجلاس منعقد کیے۔

شمالی علاقوں کے گورنر شہزادہ فیصل بن خالد بن سلطان نے عراق کے زمینی راستے سے آنے والے عازمین حج کے پہلے قافلے کا شاندار استقبال کیا۔ وہ عازمین حج کے ساتھ گھل مل گئے اور ان کے ساتھ باتیں کرتے رہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند