تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
عالمی برادری خطے میں جہازرانی کا تحفظ کرے: سعودی عرب
مقبوضہ بیت المقدس کے نواح میں اسرائیلی قابض حکام کی کارروائی میں فلسطینی مکانوں کی مسماری کی شدید الفاظ میں مذمت
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

پیر 18 ربیع الثانی 1441هـ - 16 دسمبر 2019م
آخری اشاعت: منگل 20 ذیعقدہ 1440هـ - 23 جولائی 2019م KSA 18:19 - GMT 15:19
عالمی برادری خطے میں جہازرانی کا تحفظ کرے: سعودی عرب
مقبوضہ بیت المقدس کے نواح میں اسرائیلی قابض حکام کی کارروائی میں فلسطینی مکانوں کی مسماری کی شدید الفاظ میں مذمت
سعودی عرب کے شاہ سلمان بن عبدالعزیز وزارتی کونسل کے ہفتہ وار اجلاس کی صدارت کررہے ہیں۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ

سعودی عرب کی وزارتی کونسل نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ خطۂ خلیج میں جہاز رانی کے تحفظ اور اس کو درپیش کسی بھی خطرے سے نمٹنے کے لیے ضروری اقدامات کرے۔

سعودی وزارتی کونسل کا منگل کو ہفتہ وار اجلاس خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کے زیر صدارت ہوا ۔اس میں خطے میں تجارتی جہاز رانی کو درپیش خطرات اور ان سے نمٹنے کے بارے میں غور کیا گیا ہے۔ وزارتی کونسل نے کہا کہ بین الاقوامی جہاز رانی کی آزادی کی کوئی خلاف ورزی بین الاقوامی قانون کی بھی خلاف ورزی ہے۔

واضح رہے کہ ایران کے پاسداران انقلاب نے گذشتہ ہفتے خلیج میں برطانیہ کے ایک پرچم بردار آئیل ٹینکر کو پکڑ لیا تھا۔ انھوں نے یہ کارروائی اسی ماہ جبل الطارق میں برطانیہ کی شاہی بحریہ کی کارروائی میں ایک ایرانی جہاز کو تحویل میں لینے کے ردعمل میں کی تھی۔ اس جہاز پر ایرانی تیل لدا ہوا تھا اور اس کو یورپی یونین کی پابندیوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شام بھیجا جارہا تھا۔

ان دونوں واقعات کے بعد تیل کی حمل و نقل کے لیے استعمال ہونے والی خلیج کی اہم آبی گذرگاہ میں کشیدگی پیدا ہوچکی ہے اور ایرانی لیڈر اب آئے دن دھمکی آمیز بیانات جاری کر رہے ہیں۔

سعودی پریس ایجنسی کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق وزارتی کونسل نے مقبوضہ بیت المقدس کے نواح میں واقع گاؤں صور باہر میں اسرائیل کے قابض حکام کی فلسطینیوں کے مکانوں کی مسماری کے لیے جارحانہ کارروائی کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ اسرائیلی فوج نے گذشتہ روز اس گاؤں میں بھاری مشینری اور دھماکا خیز مواد سے فلسطینیوں کے دسیوں مکانوں کو منہدم کردیا ہے۔

سعودی کابینہ نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ ’’وہ اسرائیل کی فلسطینیوں کے خلاف اس جارحیت کو رکوانے کے لیے مداخلت کرے اور مقبوضہ بیت المقدس شہر کی قانونی شناخت اور اس کی آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کی کوششوں کو رکوائے‘‘۔

فلسطینی اتھارٹی کے زیر انتظام صور باہر اسرائیل کی علاحدگی کی باڑ کے نزدیک واقع ہے اور اس کے مکینوں کو اب سکیورٹی کے نام پر بے دخل کیا جارہا ہے۔ فلسطینی اتھارٹی ، یورپی یونین سمیت کئی ایک عالمی تنظیموں نے بھی اسرائیلی حکام کی اس جارحانہ کارروائی کی مذمت کی ہے اور فلسطینیوں کو بے گھر کرنے کی پالیسی کو فوری طور پر رکوانے کا مطالبہ کیا ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند