تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
البغدادی کے جانشین 'استاذ' کے بارے میں اہم معلومات!
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

پیر 16 محرم 1441هـ - 16 ستمبر 2019م
آخری اشاعت: جمعہ 21 ذوالحجہ 1440هـ - 23 اگست 2019م KSA 13:41 - GMT 10:41
البغدادی کے جانشین 'استاذ' کے بارے میں اہم معلومات!
البغدادی کا جانشین عبداللہ قرداش
عراق ۔ ناصر العجیلی

عالمی ذرائع ابلاغ میں آنے والی رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ 'داعش' کے سربراہ ابو بکر البغدادی بیمار ہے اور اس نے علالت کی وجہ سے اپنے ایک مقرب خاص امیر محمد سعید عبدالرحمان محمد المولیٰ 'المعروف' عبداللہ قرداش' کو اپنا جانشین مقرر کیا ہے۔ عبداللہ قرداش کو 'داعش' کے عراق میں تنظیمی امور کا انچارج مقرر کیا گیا ہے۔ اس تقرری نے خلیفہ ابو بکر البغدادی کے مستقبل کے حوالے سے کئی سوالات جنم دیے ہیں۔

داعش کا نیا چہرہ کون

عبداللہ القرداش کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ عراق کے سابق صدر صدام حسین کی فوج میں رہ چکا ہے۔ وہ سنہ 1976ء میں تلعفر میں پیدا ہوا۔ اس کا شمار انتہائی متعصب، انتہا پسند اور سخت گیر قاتل جنگجوئوں میں ہوتا ہے۔

قرداش نے موصول کی امام اعظم یونیورسٹی سے گریجوایشن کی۔ اس نے القاعدہ کے قانون امور کا انچارج مقرر کیا گیا۔ اس کی البغدادی سےملاقات بصرہ شہر میں قائم 'بوکا' جیل میں ہوئی۔

داعشی سربراہ سے 16 سال پر محیط تعلق

اخباری رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ امریکی فوج نے 48 سالہ البغدادی اور قرداش کو سنہ 2003ء کو پکڑا۔ ان دونوں پر 'القاعدہ' کے ساتھ رابطوں کا الزام عاید کیا گیا تھا۔ دونوں کوالبصرہ سے گرفتار کیا گیا۔ البغدادی نے قرداش کی مدد سے سیکڑوں قیدیوں کو 'داعش' میں بھرتی کرنے کی مہم چلائی اور اس کے ساتھ مل کر 'خلافت' کا اعلان کیا۔ اس وقت سے قرداش البغدادی کا انتہائی قریب رہا ہے۔

اخباری رپورٹ کے مطابق البغدادی نے 2014ء کو موصل کی مسجد النوری میں ایک اجتماع سے خطاب میں اپنی 'خلافت' کا اعلان کیا۔ اس کے بعد داعش کے ہاں ابو بکر البغدادی کو 'خلیفہ' کا لقب دیا گیا۔

عراق کے سابق سیکیورٹی ایڈوائزر فاضل ابو رغیف نے کہا کہ ابو بکر البغدادی اپنے منصب سے دست بردار نہیں ہوں گے۔ عبداللہ قرداش کو تنظیم کی لاجسٹک شعبے کے محدود اختیارات دیے گئے ہیں۔

استاذ کا لقب

خیال رہے کہ عبداللہ قرداش کو 'داعش' کے قانون سازوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ وہ اپنی سخت پالیسی کی وجہ سے بھی مشہور رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تنظیم میں اسے 'استاذ' کا لقب دیا گیا۔ قرداش البغدادی کے قریب ہونے کے ساتھ ابو علا العفری کے بھی قریب رہا ہے۔ العفری سنہ 2016ء کو امریکا کے ایک فضائی حملے میں ہلاک ہوگیا تھا۔

داعشی سربراہ ابوبکرالبغدادی اور عبداللہ قرداش کا باہمی تعلق 16 سال پر محیط ہے۔ قرداش کا البغدادی کے سابق جانشین ابو علاء العفری کے ساتھ بھی گہرا تعلق رہا ہے۔

عبداللہ قرداش نے موصل یونیورسٹی کے اسلامک کالج سے گریجوایشن کی ڈگری حاصل کی۔ وہ صدام حسین کی فوج میں ایک عام اہلکار تھا۔ قرداش شادی شدہ ہے اور ایک بیٹا ہے۔ بیٹے کا نام محمد سعید اور دو بھائی ہیں۔ اس کا ایک بھائی عامر محمد سعید یونیورسٹی میں پروفیسر ہے جب کہ عادل محمد سعید ترکی میں ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند