تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
اسرائیل کا شام سے ایران کے یقینی حملے کو ناکام بنانے کا دعویٰ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

پیر 23 محرم 1441هـ - 23 ستمبر 2019م
آخری اشاعت: اتوار 23 ذوالحجہ 1440هـ - 25 اگست 2019م KSA 19:40 - GMT 16:40
اسرائیل کا شام سے ایران کے یقینی حملے کو ناکام بنانے کا دعویٰ
مقبوضہ بیت المقدس ۔ ایجنسیاں

اسرائیل نے شام سے ایران کے یقینی ڈرون حملے کو ناکام بنانے کا دعویٰ کیا ہے اور کہا ہے کہ اسرائیلی فوج نے دمشق کے نواح میں ایرانی اہداف کو کامیابی سے نشانہ بنایا ہے۔

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے اطلاع دی ہے کہ اس فضائی حملے میں حزب اللہ کے دو جنگجو اور ایک ایرانی ہلاک ہوگیا ہے۔ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب اسرائیلی فوج کا گذشتہ برسوں کے دوران میں یہ سب سے تباہ کن حملہ تھا۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان لیفٹیننٹ کرنل جوناتھن کونریکس نے کہا ہے کہ ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کی القدس فورس اپنی اتحادی شیعہ ملیشیاؤں کے ساتھ مل کر اسرائیل پرحملوں کے لیے دھماکا خیز مواد سے لدے ڈرون بھیجنے کی منصوبہ بندی کررہی تھی۔

ترجمان نے دعویٰ کیا ہے کہ ’’اسرائیل گذشتہ کئی ماہ سے اس سازش کی نگرانی کررہا تھا اورجمعرات کو اس نے ایران کو اس سازش پر مزید پیش قدمی سے روک دیا تھا۔پھرہفتے کی شب ایران نے دوبارہ اس حملے کی کوشش کی تھی۔‘‘

انھوں نے کہا:’’ہم لڑاکا جیٹ کے ذریعے اس حملے کو روکنے میں کامیاب رہے ہیں۔ایرانی حملے کے بارے میں یقین ہے کہ یہ ’بہت ناگزیر‘ تھا۔‘‘ترجمان کے بہ قول اسرائیل کے چیف آف اسٹاف تب سینیرافسروں کے ساتھ ایک اجلاس میں شریک تھے اور شام کی سرحد کے نزدیک افواج ہائی الرٹ تھیں۔

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے لڑاکا طیاروں کے حملے کو ایک بڑی آپریشنل کامیابی قرار دیا ہے۔ کرنل کونریکس کا کہنا تھا کہ ایرانی حملے کی یہ سازش کوئی نچلی سطح پر نہیں کی گئی تھی بلکہ یہ القدس فورس کی اعلیٰ قیادت نے کی تھی۔

شام کے سرکاری ٹی وی نے ہفتے کی شب یہ دعویٰ کیا تھا کہ ملک کی فضائیہ نے دمشق کی فضائی حدود میں مخالفانہ اہداف کو نشانہ بنایا ہے اور آنے والے میزائلوں کو ان کے اہداف تک پہنچنے سے قبل ہی تباہ کردیا ہے۔شامی ٹی وی نے اسرائیلی حملے سے متعلق مزید تفصیل نہیں بتائی ہے۔

واضح رہے کہ اسرائیل نے حالیہ برسوں کے دوران میں شام پر سیکڑوں فضائی حملے کیے ہیں۔ان میں سے زیادہ تر میں ایران سے لبنان میں حزب اللہ کو بھیجی گئی اسلحہ کی کھیپوں کو نشانہ بنایا گیا تھا۔تاہم اسرائیلی اور ایرانی فوجوں کے درمیان براہِ راست جھڑپیں نہیں ہوئی ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند