تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
بیروت میں اسرائیلی ڈرونز کا حملہ بہت خطرناک پیش رفت ہے:حسن نصراللہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 18 محرم 1441هـ - 18 ستمبر 2019م
آخری اشاعت: اتوار 23 ذوالحجہ 1440هـ - 25 اگست 2019م KSA 21:53 - GMT 18:53
بیروت میں اسرائیلی ڈرونز کا حملہ بہت خطرناک پیش رفت ہے:حسن نصراللہ
بیروت ۔ ایجنسیاں

لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے لیڈر حسن نصراللہ نے بیروت کے نواحی علاقے میں تباہ ہونے والے دو اسرائیلی ڈرونز کے حملے کوایک خطرناک پیش رفت قرار دیا ہے۔ 

حسن نصراللہ نے کہا کہ ’’اسرائیل کی تازہ پیش رفت بہت ، بہت ، بہت خطرناک ہے۔‘‘لبنانی وزیراعظم سعدالحریری نے کہا کہ ڈرونز سے علاقائی کشیدگی میں اضافہ ہوگا۔ان کے دفتر کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق ’’اس نئی جارحیت سے علاقائی استحکام کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے اور یہ کشیدگی کو مزید بڑھاوا دینے کی ایک کوشش ہے۔‘‘

قبل ازیں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے ترجمان نے کہا تھا کہ بیروت میں گرنے والے اسرائیلی ڈرونز نے مختلف اہداف کو نشانہ بنانا تھا۔ان میں ایک اسرائیلی ڈرون بیروت میں دھماکے سے پھٹ گیا تھا اور اس سے حزب اللہ کے میڈیا سنٹر کو کافی نقصان پہنچا تھا۔ترجمان کا کہنا تھا کہ ایک اور اسرائیلی ڈرون حزب اللہ نےقبضے میں لے لیا ہے۔

اسرائیلی فوج نے اس ڈرون حملے کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا۔اس ڈرون حملے سے چند گھنٹے قبل ہی شامی دارالحکومت دمشق کے نواح میں اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے ایرانی فورسز اور شیعہ ملیشیا کے اہداف کو نشانہ بنایا تھا اور یہ دعویٰ کیا تھا کہ وہ اسرائیل میں اہداف کو ڈرون سے نشانہ بنانے کی منسوبہ بندی کررہے تھے۔

شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق کی اطلاع کے مطابق اس حملے میں حزب اللہ کے دو ارکان اور ایک ایرانی مارا گیا ہے۔اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے ٹویٹر پر کہا ہے کہ’’ایران کو کسی جگہ استثنا حاصل نہیں ہے،ہماری فورسز ایرانی جارحیت کے خلاف ہر شعبے میں کام کررہی ہیں۔ اگر کوئی آپ کو قتل کرنے کے لیے اٹھ کھڑا ہو تو اس کو پہلے ہی قتل کردو‘‘۔

ایران کی نیم سرکاری خبررساں ایجنسی ایلنا کے مطابق سپاہِ پاسداران انقلاب کے ایک سینیرکمانڈر نے شام میں کسی ایرانی ہدف کو نشانہ بنانے کی تردید کی ہے۔

حزب اللہ کے ترجمان نے لبنان کی سرکاری خبررساں ایجنسی این این اے کو بتایا کہ ایک اسرائیلی ڈرون کے حملے میں تنظیم کے میڈیا سنٹر کو شدید نقصان پہنچا ہے۔حزب اللہ نے ایک ڈرون کوقبضے میں لینے کا دعویٰ کیا ہے اور کہا ہے کہ اب اس کا معائنہ کیا جارہا ہے۔

لبنانی فوج کے مطابق ایک اسرائیلی ڈرون مقامی وقت کے مطابق اتوار کو علی الصباح ڈھائی بجے دھماکے سے پھٹ گیا تھا اور اس سے صرف مادی نقصان ہوا ہے۔ایک ڈرون بغیر پھٹے ہی گر گیا تھا۔دونوں ڈرون گرنے کے فوری بعد فوجیوں نے بیروت کے اس نواحی علاقے کا محاصرہ کر لیا تھا۔

دریں اثناء لبنان نے اقوام متحدہ میں یہ شکایت کی ہے کہ اسرائیل کے لڑاکا طیاروں نے حالیہ برسوں کے دوران میں اس کی فضائی حدود کی بار بار خلاف ورزی کی ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند