تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
لبنان کے جنوبی مضافات میں دو اسرائیلی ڈرونز گر کر تباہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 18 محرم 1441هـ - 18 ستمبر 2019م
آخری اشاعت: اتوار 23 ذوالحجہ 1440هـ - 25 اگست 2019م KSA 09:46 - GMT 06:46
لبنان کے جنوبی مضافات میں دو اسرائیلی ڈرونز گر کر تباہ
دبئی – العربية ڈاٹ نیٹ

اتوار کے صبح بیروت میں جنوبی لبنان کا مضافاتی علاقہ زوردار دھماکوں سے لرز اٹھا۔ حزب اللہ ملیشیا کے ایک عہدیدار کے مطابق یہ دھماکے اسرائیلی ڈرون اور ایک دوسرے جہاز کے گرنے کے نتیجے میں پیدا ہوئے۔

خبر رساں ادارے ’’رائیٹرز‘‘ سے بات کرتے ہوئے حزب اللہ کے نامعلوم عہدیدار نے بتایا کہ اسرائیلی ڈرون ایران نواز حزب اللہ کے زیر نگین بیروت کے جنوبی مضافاتی علاقے میں گرا۔ ادھر دوسری جانب اسرائیل کا ایک دوسرا طیارہ اتوار کو علی الصباح دھماکے سے تباہ ہوا۔

عہدیدار نے مزید بتایا کہ تباہ ہونے والے دوسرے اسرائیلی ڈرون کا ملبہ جنوبی مضافات میں حزب اللہ کے میڈیا سینٹر کے قریب ایک کالونی میں گرا، جس کی وجہ سے علاقے میں جانی اور مالی نقصان کا اندیشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔

اسرائیلی فوج نے یہ کہہ کر اس بات پر تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے کہ ’’وہ غیر ملکی خبر رساں اداروں کی اطلاعات پر تبصرہ نہیں کیا کرتے۔‘‘

جنوبی لبنان کے مضافات کے رہائشیوں کے حوالے سے ’’رائیٹرز‘‘ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ انھوں نے زوردار دھماکے کی آواز سنی۔ ایک عینی شاھد نے مطابق لبنانی فوج نے طیارہ گرنے سے آگ لگنے کی ایک واقعہ کی اطلاعات کے بعد اس کالونی کو جانے والے راستے بند کر دیئے ہیں، جس کے باعث فوری طور پر نقصان کی تفصیل معلوم نہیں ہو سکی۔

’’العربیہ‘‘ اور اس کے معاصر عزیز ’’الحدث‘‘ کے نامہ نگاروں نے اپنی رپورٹس میں بتایا ہے کہ غالب امکان یہی ظاہر کیا جا رہا ہے کہ تباہ ہونے والے دونوں طیارے بغیر پائلٹ ’’ڈرونز‘‘ تھے، تاہم ابھی ان کے ’’مشن‘‘ سے متعلق معلومات نہیں ملیں اور نہ ہی لبنانی فوج نے اس پر کسی قسم کا تبصرہ کیا ہے۔

ہمارے نامہ نگاروں نے اپنے مراسلوں میں اس امر کی جانب اشارہ کیا ہے کہ حزب اللہ کے جنرل سیکرٹری حسن نصر اللہ اتوار کو بعد از ظہر اس معاملے پر لب کشائی کریں گے۔

یاد رہے کہ اسرائیل اور حزب اللہ 2006 میں کئی ماہ تک جاری رہنے والی جنگ لڑ چکے ہیں جس میں کم سے کم 1200 لبنانی مارے گئے۔ اس جنگ میں ہلاک ہونے والوں کی بڑی تعداد عام شہریوں کی تھی۔ اسرائیل کے اس جنگ میں 158 افراد ہلاک ہوئے، جن میں بڑی اکثریت فوجیوں کی تھی۔

لبنان میں اسرائیلی ڈرونز کی تباہی کے چند ہی گھنٹوں بعد اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے دمشق کے قریب ایرانی فوج کے ایک اڈے پر بمباری کی۔

اسرائیلی فوجی ترجمان کے مطابق اس کارروائی میں القدس بریگیڈ کے ان اہلکاروں کو نشانہ بنایا گیا جو تل ابیب میں اہداف کو نشانہ بنانے کے لئے بغیر پائلٹ جاسوسی طیارہ اڑانے کی تیاری کر رہے تھے۔

’’العربیہ‘‘ کے نامہ نگار نے بتایا کہ اسرائیلی فوج نے دمشق میں القدس بریگیڈ کیمپ پر حملے میں جانی ومالی نقصان کی تصدیق کی ہے.

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند