تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
شامی خاتون اوّل کا چچا زاد لبنان میں اغوا، ایک کروڑ ڈالر تاوان طلب
کیا اغوا کی پر اسرار واردات کے پیچھے اسد رجیم کے حامیوں کا ہاتھ کارفرما ہے؟
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 19 صفر 1441هـ - 19 اکتوبر 2019م
آخری اشاعت: بدھ 18 محرم 1441هـ - 18 ستمبر 2019م KSA 21:15 - GMT 18:15
شامی خاتون اوّل کا چچا زاد لبنان میں اغوا، ایک کروڑ ڈالر تاوان طلب
کیا اغوا کی پر اسرار واردات کے پیچھے اسد رجیم کے حامیوں کا ہاتھ کارفرما ہے؟
بیروت ۔ جوانی فخری

شام کے صدر بشار الاسد کی اہلیہ اسماء الاسد کے چچا زاد مرہف طریف الاخرس کی لبنان میں پراسرار اغوا کی واردات میں نئی پیش رفت ہوئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق مرہف طریف الاخرس کو کسی گروپ نے تاوان کےلیے اغوا کیا ہے۔ اغوا کاروں نے مرہف الاخرس کی رہائی کے بدلے میں دو ملین ڈالر نہیں بلکہ ایک کروڑ ڈالر کی خطیر رقم کا مطالبہ کیا ہے۔

مرہف طریف الاخرس کو گذشتہ جمعرات کو لبنان میں وادی البقاع کے علاقے شتورہ اور جبل لبنان کے علاقے عالیہ کے درمیان ایک سڑک سے اغوا کر لیا گیا تھا۔ ان کے پاس شام کی شہریت کے ساتھ لبنان کی بھی شہریت ہے۔

لبنان کے ایک فوجی ذریعے کے مطابق ان کی کار سڑک پر ویران علاقے میں خالی پائی گئی تھی۔ وہ دمشق سے براہ راست بیروت جا رہے تھے کہ راستے میں انھیں اغوا کاروں یرغمال بنا کر اپنے ساتھ لے گئے۔

لبنانی میڈیا کے مطابق اغوا کاروں نے ان کی رہائی کے بدلے میں 20 لاکھ ڈالر کے مساوی رقم مانگی تھی۔ تاہم تازہ اطلاعات یہ ہیں کہ یہ رقم دو ملین نہیں بلکہ 10 ملین ڈالر ہے۔

مرہف طریف الاخرس کی عمر 30 سال سے زیادہ ہے اور وہ شام کی اہم کاروباری شخصیت طریف الاخرس کا بیٹا ہے۔ الاخرس فیملی شام اور دوسرے ملکوں میں چاول، چینی، کیلے کی تجارت کےساتھ ساتھ بنک کاری اور رئیل اسٹیٹ سمیت کئی دوسرے شعبوں میں بڑے پیمانے پر کاروبار کررہی ہے۔

مرہف الاخرس نے غالبا 2018ء میں لبنان کی شہریت حاصل کی۔ وہ تین سال سے اپنے بیوی بچوں کے ساتھ بیروت میں مقیم ہیں اور آزادانہ دمشق اور بیروت کا سفر کرتے رہتے ہیں۔

"مالی مقاصد"

فوجی ذرائع نے بتایا کہ "اغوا مالی مقاصد سے منسلک ہے کیونکہ الاخرس بشارالاسد کے محدود اور قریبی حلقے میں شامل افراد سے تعلق رکھنے والا تاجر ہے۔ اس واردات میں لبنان میں موجود اسد رجیم کے اتحادیوں کے ملوث ہونے کا امکان رد نہیں کیا جاسکتا۔ جس علاقے سے الاخرس کو اغوا کیا گیا وہ اسد رجیم کے حامیوں کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔ یہاں کے عناصر امریکی پابندیوں کی وجہ سے رقوم کے حصول میں مشکلات کا سامنا کر رہے ہیں۔

مرہف الاخرس کے اغواء کی خبر ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب دوسری طرف یہ افواہیں بھی گردش کر رہی ہیں کہ اسماء الاسد اپنے شوہر بشارالاسد کی جانشینی کے لیے مرہف الاخرس کو تیار کر رہی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اسماء الاسد اپنا اثرو نفوذ استعمال کرتے ہوئے اپنے حامی عناصر کو زیادہ سے زیادہ رقوم کے حصول کا موقع فراہم کر رہی ہے۔ بشار الاسد کے مخلوف خاندان کے ساتھ اختلافات کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ اسماء الاسد مخلوف خاندان کو رقوم کی فراہمی کے لیے کوشاں ہیں۔

ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ مخلوف خاندان سے بشار الاسد کے اختلافات اس وجہ سے تھے کہ اسماء ان کی جانشینی کے لیے مرہف الاخرص تیاری کے لیے مخلوف خاندان کے زیر کنٹرول علاقوں میں رقوم اپنے بھائیوں اور بہنوں کو منتقل کرنا چاہتی تھی۔

انقلابی کارکن خالد ترکاوی نے بتایا تھا کہ مرہف الاخراس نے جون 2014ء میں حمص کے باغیوں کو شہر چھوڑنے سے پہلے ایک بڑی رقم فراہم کی تھی۔ اس پر مرہف کے والد نے بیٹے کوعارضی طور پر ملک سے نکال دیا تھا اور ساتھ ہی ملٹری سیکیورٹی برانچ کو اپنی کارروائیوں کے لیے مالی اعانت فراہم کی تھی تاکہ وہ اس کے بیٹے کے اقدام کو نظر انداز کر دیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند