تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
سعودی عرب اور کویت کے مشترکہ کنووں سے تیل نکلنے پر امریکی خیر مقدم
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 14 شعبان 1441هـ - 8 اپریل 2020م
آخری اشاعت: جمعہ 29 ربیع الثانی 1441هـ - 27 دسمبر 2019م KSA 10:24 - GMT 07:24
سعودی عرب اور کویت کے مشترکہ کنووں سے تیل نکلنے پر امریکی خیر مقدم
العربیہ ڈاٹ نیٹ

امریکا نے کویت اور سعودی عرب کی حکومتوں کے درمیان تیل کے مشترکہ کنوئوں سے تیل نکالنے کے سمجھوتے کا خیر مقدم کیا ہے۔ امریکی حکومت کا کہنا ہے کہ سعودی عرب اور کویت کا زمینی اور سمندری حدود میں تیل کے کنوئوں میں موجود تیل نکالنے پر اتفاق اہم پیش رفت ہے۔ اس معاہدے کے نتیجے میں کئی سال سے تعطل کا شکار تیل کی سپلائی ممکن ہو سکے گی۔

سعودی عرب میں قائم امریکی سفارت خانے کی طرف سے کل جمعرات کے روز جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سعودی عرب اور کویت میں منقسم تیل کے کنوئوں سے تیل کے اخراج سے دونوں ملکوں کو فائدہ پہنچے گا اور عالمی سطح پر تیل کی سپلائی میں بھی اضافہ ہوگا۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ امریکا کو مستقبل قریب میں کویت گلف آئل کمپنی اور سعودی شیورون کمپنی کے مابین تیل کے اخراج پر اشتراک عمل کے بارے میں مطلع کیا گیا ہے۔

سعودی وزیر توانائی کے شہزادہ عبد العزیز بن سلمان بن عبد العزیز نے کہا تھا کہ کویت کے ساتھ مشترکہ تیل تنصیبات سے تیل کی پیداوار دوبارہ شروع ہونے سے عالمی منڈی میں مملکت کی تیل کی سپلائی کی سطح متاثر نہیں ہو گی۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ مملکت کی پیداوار حالیہ "اوپیک +" معاہدے میں طے شدہ اہداف کے مطابق روزانہ 9 اعشاریہ 744 ملین بیرل تیل کی پیداوار جاری رکھے گا۔

سعودی پریس ایجنسی کی اطلاع کے مطابق وزیر تیل شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان بن عبدالعزیز اور کویتی وزیر خارجہ ڈاکٹر احمد ناصر محمد الصباح نے نیوٹرل زون میں واقع الوفرہ میں منگل کے روز منعقدہ ایک تقریب میں سمجھوتے پر دست خط کیے ہیں۔

مفاہمت کی یادداشت(ایم او یو) پر سعودی عرب کے وزیر توانائی شہزادہ عبدالعزیز اور کویت کے وزیر توانائی اور پانی و بجلی ڈاکٹر خالد علی الفاضل نے دست خط کیے ہیں۔

شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سمجھوتے اور ایم او یو پر دست خط دونوں ممالک کے درمیان شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور امیرِکویت شیخ صباح الاحمد الصباح کے زیر قیادت شاندار اور ممتاز برادرانہ تعلقات کے غماز ہیں۔

انھوں نے دونوں ملکوں کے درمیان ان کے باہمی مفاد میں اس تاریخی سمجھوتے کی تکمیل میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی کاوشوں کو سراہا۔ انھوں نے واضح کیا کہ ’’ان مشترکہ کنووں سے پیداوار کی بحالی سے عالمی مارکیٹ میں سعودی عرب کی تیل کی رسد کی سطح پر کچھ فرق نہیں پڑے گا۔سعودی عرب کی تیل کی پیداوار کو اوپیک اور غیر اوپیک ممالک کے درمیان طے شدہ سمجھوتے کے مطابق 97 لاکھ 44 ہزار بیرل یومیہ پر برقرار رکھا جائے گا۔‘‘

کویت کے وزیر تیل خالد الفاضل نے بھی ان کی اس بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ ’’ دو کنووں اکخفجی اور الوفرہ سے تیل کی پیداوار کی بحالی سے سعودی عرب اور کویت کی بین الاقوامی ذمے داریوں پر کچھ فرق نہیں پڑے گا۔‘‘

یہ بیان شہزادہ عبد العزیز کے موقع پر کویت کے وزیر خارجہ ڈاکٹر احمد ناصر آل محمد الصباح کے ہمراہ مشترکہ شعبوں سے تیل کی پیداوار دوبارہ شروع کرنے کے لئے ڈویژن معاہدے اور فلڈ زون معاہدے سے منسلک ایک معاہدے پر دستخط کیے۔

دونوں طرف تیل کی پیداوار دوبارہ شروع کرنے کے طریق کار کے حوالے سے مفاہمت کی یادداشت پر بھی دستخط ہوئے، جس پر سعودی طرف شہزادہ عبد العزیز اور کویت کی طرف سے وزیر تیل وبجلی اور پانی کے وزیر ڈاکٹر خالد علی الفادل نے دستخط کیے۔

سعودی عرب اور کویت نے گذشتہ روز مشترکہ شعبوں سے تیل کی پیداوار دوبارہ شروع کرنے کے لئے تقسیم ڈویژن معاہدے اور فلڈ زون معاہدے سے منسلک ایک معاہدے پر دستخط کیے اور دونوں فریقوں میں تیل کی پیداوار دوبارہ شروع کرنے کے طریق کار سے متعلق مفاہمت کی یاد داشت پر دستخط ہوئے۔

 

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند