تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
گوئٹے مالا بھی حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے قریب
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 3 رجب 1441هـ - 27 فروری 2020م
آخری اشاعت: منگل 18 جمادی الاول 1441هـ - 14 جنوری 2020م KSA 11:22 - GMT 08:22
گوئٹے مالا بھی حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے قریب
لندن - كمال قبيسی

وسطی امریکا میں میکسیکو ، ہنڈوروس اور ال سلواڈور کے بیچ واقع گوئٹے مالا اُن ملکوں کے کیمپ میں شامل ہونے جا رہا ہے جو لبنانی ملیشیا "حزب الله" کو ایک دہشت گرد تنظیم شمار کرتے ہیں۔

گوئٹے مالا کے 63 سالہ نئے صدر آلجاندرو جیاماتی اپنی بیماری کے سبب بیساکھیوں کے بغیر چلنے سے قاصر ہیں۔ وہ کل بدھ کے روز اپنا منصب سنبھالیں گے۔ گذشتہ ماہ دسمبر کے اوائل میں اسرائیل کا دورہ کرنے کے موقع پر جیاماتی کا کہنا تھا کہ "صدر کا منصب سنبھالنے کے بعد وہ سب سے پہلے گوئٹے مالا کی سیکورٹی کونسل کے ذریعے لبنانی حزب اللہ کو ایک دہشت گرد تنظیم قرار دیں گے"

اس طرح گوئٹے مالا اُن متعدد ممالک کی فہرست میں شامل ہو جائے گا جو اس ایرانی نواز لبنانی ملیشیا کو دہشت گرد تنظیم کا درجہ دے چکے ہیں۔ ان ممالک میں اسرائیل، امریکا، کینیڈا، برطانیہ، ہالینڈ، جاپان، ارجنٹائن، پیراگوائے، سعودی عرب، بحرین، متحدہ عرب ممالک کے علاوہ عرب لیگ اور خلیج تعاون کونسل کے ممالک شامل ہیں۔ یورپی یونین اور آسٹریلیا نے حزب اللہ کے صرف عسکری ونگ کو دہشت گرد قرار دیا ہے۔

گذشتہ برس اگست میں صدارتی انتخابات میں کامیاب ہونے والے آلجاندرو جیاماتی ایک پیچیدہ مرضMultiple Sclerosis میں مبتلا ہیں۔ اسی کے سبب وہ چلنے کے لیے بیساکھیوں کا استعمال کرتے ہیں۔ جیاماتی نے اپنی بیٹی مارسیلا کو "خاتون اول" کا درجہ دینے کا فیصلہ کیا ہے کیوں کہ جس خاتون سے 1989 میں انہوں نے شادی کی تھی وہ طلاق حاصل کر چکی ہے۔ جیاماتی کے کُل تین بچے یعنی دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے۔

گوئٹے مالا کی آبادی 1.8 کروڑ نفوس پر مشتمل ہے۔ امریکا کے بعد یہ دوسرا ملک تھا جس نے اسرائیل میں اپنا سفارت خانہ تل ابیب سے بیت المقدس منتقل کیا۔

گوئٹے مالا میں نئی حکومتی کابینہ کے وزراء کی تعداد 15 ہے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کی تحقیق کے مطابق ان میں ایک لبنانی نژاد Antonio Malouf بھی ہیں۔ گوئٹے مالا کے دارالحکومت میں 1969 میں پیدا ہونے والے آنتونیو مالوف نئی حکومت میں معیشت کے وزیر ہوں گے۔ ان کی ماں کا تعلق گوئٹے مالا اور باپ کا لبنان سے ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند