تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
بغداد میں راستوں کی بندش، سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 2 رجب 1441هـ - 26 فروری 2020م
آخری اشاعت: پیر 24 جمادی الاول 1441هـ - 20 جنوری 2020م KSA 19:53 - GMT 16:53
بغداد میں راستوں کی بندش، سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں
دبئی – العربیہ ڈاٹ نیٹ

عراق کے دارالحکومت بغداد میں پیر کی صبح راستوں کی بندش دیکھنے میں آئی۔ اس دوران سیکورٹی کو ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے۔ العربیہ اور الحدث نیوز چینلوں کے نمائندے کے مطابق سیکورٹی فورسز کی مظاہرین کے ساتھ جھڑپیں بھی ہوئیں جنہوں نے دارالحکومت میں "محمد القاسم" کے بنیادی اہمیت کے حامل راستے اور بغداد کو ناصریہ سے ملانے والے بین الاقوامی ہائی وے بند کر دیا تھا۔ اس کے علاوہ میسان اور دارالحکومت بغداد کو جوڑنے والا راستہ بھی بند کر دیا گیا۔

اس دوران عراقی سیکورٹی فورسز نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کے گولے داغے۔

عراقی سیکورٹی میڈیا نے باور کرایا ہے کہ بغداد کی کارروائیوں کا مقصد اُن تمام راستوں کو کھول دینا ہے جن کو مظاہرین نے بند کرنے کی کوشش کی۔ عراقی سیکورٹی فورسز نے راستے بند کرنے کی کوشش کرنے والے ایک گروپ کو حراست میں لے لیا۔

ادھر ملک کے وسطی حصے میں مذکورہ نمائندے نے بتایا کہ مظاہرین نے واسط صوبے کے شہر کوت میں مرکزی راستے بند کر دیے۔ عراق کے جنوبی علاقوں میں کشیدگی بڑھ جانے کی توقع کے ساتھ سیکورٹی فورسز کو بھاری تعداد میں تعینات کیا گیا ہے۔

مظاہرین کی جانب سے دیوانیہ کو عراق کے دیگر صوبوں سے ملانے والے ہائی وے کو بھی بند کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ مظاہرین کی جانب سے اپنے مطالبات پر عمل درامد کے لیے ملکی حکام کو دی گئی مہلت آج ختم ہوگئی ہے۔ ان مطالبات میں سرفہرست سیاسی جماعتوں کے کوٹے اور سیاسی شخصیات سے دور ایک عارضی حکومت تشکیل دینا، قبل از وقت پارلیمانی انتخابات کا اجرا اور مظاہرین کے قتل اور کارکنان کے اغوا کی تحقیقات کرانا ہے۔

درالحکومت بغداد کی روش کو اپناتے ہوئے گذشتہ روز اتوار کو عراق کے جنوب میں متعدد صوبوں میں راستے اور پُلوں کو بند کر دیا گیا اور اسکولوں اور دفاتر کو تالا لگا دیا گیا۔

عراق کے جنوبی صوبں ذی قار اور دیوانیہ میں مظاہرین کفن پہن کر سڑک پر نکلے۔ انہوں نے باور کرایا کہ یہ آج کے مظاہروں کے لیے سرکاری لباس ہے۔ بابل اور واسط کے صوبوں میں بھی مظاہرین نے اسکولوں اور سرکاری دفاتر میں تعطیل کا اعلان کر دیا۔

ادھر بصرہ میں بھی احتجاج کرنے والے دیگر صوبوں کے مقابلے میں پیچھے نہیں رہے۔ انھوں نے سرکاری دفاتر اور اسکولوں کو تالا ڈالنے اور راستوں کو بند کر دینے کا مطالبہ کیا۔ پولیس نے اتوار کی شام یہ اعلان کیا کہ وہ دفاتر اور اسکولوں کی تالا بندی اور ٹریفک کی آمد و رفت کو محفوظ بنانے کے لیے قانون کے مطابق سختی سے پیش آئے گی۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند