تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
احتجاجی سیاست سے تائب ہونے پر خادم رضوی اور افضل قادری کو ضمانت مل گئی
لاہور ہائی کورٹ کا دونوں ملزمان کو پانچ پانچ لاکھ روپے کے مچلکے جمع کرانے کا حکم
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعرات 14 ربیع الثانی 1441هـ - 12 دسمبر 2019م
آخری اشاعت: منگل 9 رمضان 1440هـ - 14 مئی 2019م KSA 20:08 - GMT 17:08
احتجاجی سیاست سے تائب ہونے پر خادم رضوی اور افضل قادری کو ضمانت مل گئی
لاہور ہائی کورٹ کا دونوں ملزمان کو پانچ پانچ لاکھ روپے کے مچلکے جمع کرانے کا حکم
دائیں سے: خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری
ایجنسیاں

پاکستان کے صوبہ پنجاب کی سب سے بڑی عدالت ہائی کورٹ نے تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ خادم حسین رضوی اور مرکزی رہنما پیر افضل قادری کی درخواست ضمانت منظور کرلی۔

جسٹس قاسم علی خان اور جسٹس اسجد جاوید گھرال پر مشتمل لاہور ہائی کورٹ کے دو رکنی بنچ نے خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کی درخواست ضمانتوں کی سماعت کی۔

عدالت عالیہ نے فیصلہ سناتے ہوئے ٹی ایل پی کے دونوں رہنماؤں کی درخواست ضمانت 15 جولائی تک منظور کرتے ہوئے انہیں رہا کرنے کا حکم دے دیا۔ ہائی کورٹ نے درخواست گزاروں کو پانچ پانچ لاکھ کے مچلکے جمع کرانے کا حکم دیا۔ ہائی کورٹ نے ملزمان اور استغاثہ کے دلائل مکمل ہونے پر 10 مئی کو فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

واضح رہے کہ خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری سمیت پارٹی کے اہم رہنماؤں کے خلاف بغاوت اور دہشت گردی کے مقدمات درج ہیں۔ گزشتہ دنوں ہی پیر افضل قادری نے عدلیہ اور فوج کے خلاف متنازع تقریر پر معافی مانگتے ہوئے تحریک لبیک چھوڑنے کا اعلان کیا تھا۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند