تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
پاکستان کے بارے میں انڈین کیا سوچتے ہیں!
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

منگل 25 جمادی الاول 1441هـ - 21 جنوری 2020م
آخری اشاعت: جمعرات 2 جمادی الثانی 1435هـ - 3 اپریل 2014م KSA 09:27 - GMT 06:27
پاکستان کے بارے میں انڈین کیا سوچتے ہیں!

یہ درست ہے کہ ہمسائیوں کے ساتھ تعلقات خوشگوار ہونے چاہئیں یا کم از کم ناخوشگوار اور کشیدہ نہیں ہونے چاہئیں۔ اس وقت پاکستان کی منتخب اور مقتدر سیاسی قیادت اسی سوچ کی حامل ہے۔ مگر کیا بھارت میں بھی یہی سوچ ہے ؟ اگر ایسا نہیں تو ان کی قیادت پاکستان کے بارے میں کیا سوچ رکھتی ہے؟یہ جاننا ضروری ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ وہاں کے عام لوگ تو ہمارے عوام کی طرح کسی سے جنگ نہیں چاہتے اور امن کے خواہاں ہیں۔ مگر بھارت کی سیاسی قیادت اور اسٹیبلشمنٹ کی سوچ (Mindset)مختلف ہے۔ زیادہ تر تجزیہ نگار اس خاص سوچ کی جڑیں تاریخی حقائق میں تلاش کرتے ہیں۔ اشوکہ کے بعد پورے ہندوستان پر کبھی کوئی ہندو حکمران نہیں رہا۔ افغانستان اور سنٹرل ایشیا سے آنے والے مسلمان ہندوستان پر حکومت کرتے رہے اور ہندو اکثریت میں ہوتے ہوئے بھی مسلمان حکمرانوں کی رعایا رہے۔ اُس وقت تو وہ کچھ نہ کرسکے مگر 1947ء کے بعد پہلی بار ہندوستان کا حکمران بننے کے بعد وہ مسلمانوں سے انتقام لینے پر تُل گئے ۔ ان کے انتقام کا نشانہ آئے دن بھارت میں بسنے والے مسلمان بنتے ہیں۔

اس کے برعکس آج پاکستان میں اقلیتوں کے ساتھ کوئی ظلم کرے اور قانون کی گرفت سے بچ جائے، ان کے گھر جلا دے اور اس کے خلاف کارروائی نہ ہو، اس کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔ چند ماہ قبل لاہور میں عیسائیوں کی جوزف کالونی میں شر پسندوں نے چند گھروں کو نقصان پہنچایا تو صوبائی حکومت ، عوام، میڈیا اور عدلیہ مسیحی بھائیوں کے ساتھ کھڑے ہو گئے۔ پنجاب حکومت نے پولیس کے تمام سینئر افسرتبدیل کر دئیے اور پوری کالونی کے مکینوں کو نئے مکانات بنا کر دئیے ۔ بدقسمتی سے آج بھی بھارت میں اقلیتیں ایسے سلوک کی حقدار نہیں سمجھی جاتیں۔ اپنے قیام کے دوران ہی معلوم ہوا کہ چند ہفتے پہلے مظفر نگر میں مسلمانوں کی بستیاں جلا دی گئیں تھیں جس کے بعد وہ کیمپوں میں رہنے پر مجبور ہو گئے۔ ان کے ساتھ زیادتی کرنے والے مجرموں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہوئی تھی۔ انتخابی تقریروں میں دونوں بڑی پارٹیوں کے لیڈر نریندرمودی اور راہول گاندھی مظلوم مسلمانوں کے زخموں پر مرہم رکھنے کی بجائے ان پر نمک چھڑک رہے تھے اور کیمپوں میں پڑے ہوئے بے سہارا مسلمانوں پر ISIسے رابطے رکھنے کے بھونڈے الزام لگا رہے تھے۔

بھارتی حکومت کی جانب سے ہندوستان کے مسلمان حکمرانوں کی ہرعلامت اور ہر یادگار سے بغض کا اظہار بڑا نمایاں نظر آتا ہے۔ قطب مینار کے احاطے میں سلاطینِ ھند کی قبریں اتنی خستہ اور شکستہ حالت میں ہیں کہ لوگ اینٹیں تک لے جا رہے ہیں۔ شاہی مسجد کی دیواریں کالی اور فرش میلا ہو چکا ہے، صفائی اور صاف پانی ندارد اور روشنی نہ ہونے کے برابر ہے۔ شاہی مسجد سے شوکت وعظمت کی بجائے وہاں کے مسلمانوں کی سی کسمپرسی جھلکتی ہے۔

جدید دور میں اگر کسی نے غلامی کا مشاہدہ کرنا ہو تو بھارت میں بسنے والے مسلمانوں کو دیکھ لے۔ بھیڑوں کے قریب کوئی خونخوار جانور آ جائے تو ڈر اور خوف سے جو حالت بیچاری بھیڑوں کی ہو جاتی ہے وہی حالت انڈین مسلمانوں کی ہے۔ اگر آپ ان سے ان کے حالات یا مسائل پر گفتگو کرنا چاہیں تو وہ سہمی ہوئی نظروں سے دائیں بائیں دیکھنا شروع کر دیں گے اور آپ کو جواب دئیے بغیر کھسک جائیں گے اور کھل کر بات نہیں کریں گے۔ ایسا طرزِ عمل صرف نچلے طبقے کا ہی نہیں کروڑ پتی کاروباری مسلمان بھی اسی طرح سہمے ہوئے اور خوفزدہ نظر آتے ہیں۔ انڈیا میں معروف مسلمان فلمی اداکاروں کا حال بھی مختلف نہیں ہے۔ اگرچہ نام کے سوا ان کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں مگر پھر بھی اپنے آپ کو قابلِ قبول بنائے رکھنے اور اپنی survivalکیلئے وہ کبھی مودی جیسے انتہا پسند لیڈروں کے حق میں اور کبھی پاکستان کے خلاف بات کر کے اپنے آپ کو بھارت کا وفادار ثابت کرنے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔ غلامی واقعی بہت بری لعنت ہے۔اسی لئے اقبالؒ غلاموں کی بصیرت اور رائے کو قابلِ اعتبار نہیں سمجھتے تھے۔

ہمارا ہمسایہ ملک رقبے اور آبادی میں وسیع ہے مگر حکمرانوں کا دل تنگ اور سوچ محدود ہے پاکستان ان کے ذہنوں پر سوار ہے۔سرکاری سطح پر تنگ نظری کی بہتات ہے پاکستان سے جانے والوں پر پابندی اور انتہا پسندی وافرہے۔ ایک تاثر یہ ہے کہ اُردو زبان کو آہستہ آہستہ ختم کرنا اور بھارت اور پاکستان کے درمیان سرحدکی لکیر کو کمزور کرنا انڈین اسٹیبلشمنٹ کے بڑے اہداف ہیں ۔ فلمی تقریبات میں خصوصی ہدایات کے تحت انڈین اداکار’’لکیر‘‘ پر اعتراض کرتے ہیں اوریہاں سے گئے ہوئے اداکاروں اور اداکاراؤں پر، جو پیسے کے لالچ میں ایمان، عزّت، عصمت، آزادی سب کچھ بیچنے کیلئے تیار ہوتے ہیں۔ لازم ہوتا ہے کہ وہ سٹیج پر آ کر کہیں کہ' یہ سرحد کی لکیریں فن کو نہیں روک سکتیں اور وہ بدبخت اسی طرح کی باتیں کرتے ہیں۔ کچھ سال پہلے بھارت میں ایسی ہی ایک تقریب میں جب یہ تکرار شروع ہوئی کہ ’’فن کی کوئی حدود نہیں ہوتیں‘‘تو معروف شاعرسیّد ضمیر جعفری مرحوم و مغفور کھڑے ہو گئے اور انہوں نے یہ کہہ کر سب کو چُپ کرا دیا کہ ’’بھائی !فن کی حدود نہ ہوتی ہوں مگر فنکار کی حدود ہوتی ہیں، ہرفنکار کا اپنا ملک ہوتا ہے اور وہ اپنے ملک کا وفادار ہوتا ہے اگر وہ اپنی حدود کا پابند اور اپنے ملک کا وفادار نہ ہو تو وہ دھوبی کا وہ کتا ہے جو نہ گھر کا رہتا ہے نہ گھاٹ کا‘‘

پاکستان کے ایک سینئر سفارتکار نے عشائیے کا اہتمام کیا جس میں بڑی تعداد میں انڈین مہمان بھی آئے ۔ یہ پڑھے لکھے لوگ تھے اور ان میں سے اکثر بزنس کے سلسلے میں یا سیمینارز میں شرکت کیلئے کئی بار پاکستان آ چکے تھے۔ وہ سب ایک ہی طرح کی باتیں کر رہے تھے۔ سب سے پہلے وہ پاکستان کا دوست ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں پھر پاکستان کے دوروں میں محسوس ہونے والی اپنائیت کا ذکر کرتے ہیں۔ یہاں کے کسی نہ کسی علاقے سے اپنے آباؤ اجداد کے تعلق کا بڑے جذباتی انداز میں ذکر کرتے ہیں اور پھر تیسرے مرحلے پر وہ سکھائی ہوئی ٹیپ شدہ کہانی شروع کرتے ہیں کہ’’ہمارے درمیان کیوں یہ لکیر کھینچ دی گئی ہے‘‘۔ یہ نیتاؤں (سیاسی لیڈروں)کے غلط فیصلے تھے ۔ یہ لکیر ہمیں جدا نہیں کرسکتی ہم ایک ہوتے تو کتنا بڑا ملک ہوتے‘‘۔ لکیر کی تکرار بڑھی تو مجھے مداخلت کرنا پڑی۔ میں نے انہیں دوٹوک انداز میں بتایا کہ" لکیر" ہماری آزادی کی ضامن ہے۔ یہ لکیر ہمارے علیحدہ وجود کی علامت ہے۔ یہ لکیر ہمارے راہنماؤں اور ہمارے آباواجداد کی عظیم جدّوجہد کی منزل ہے، ایک طرف آپ دوستی کی بات کرتے ہیں مگر یہ کس قسم کی دوستی ہے جو آپ ہمارے وجود سے انکار کر کے ہم سے لگانا چاہتے ہیں؟ ہمارے علیحدہ تشخص کو تسلیم نہ کرکے آپ کیسے تعلقات چاہتے ہیں؟ کیا آپ پاکستان کے 18کروڑ آزاد، ذہین اور باوقار پاکستانیوں کی آزادی چھیننے کے خواہشمند ہیں اور انہیں بھی غلام بنا کر کیمپوں میں رکھنا چاہتے ہیں؟ ایسا ہرگز نہیں ہو گا۔ ایسی خواہشات اب دل سے نکال دیں۔ بہتر ہے کہ اب ہم ایک دوسرے کے وجود کو تسلیم کریں اور اچھے ہمسائیوں کی طرح رہیں‘‘۔ پھر جب وہ پیگ پر پیگ چڑھا کر بالکل آؤٹ ہو جاتے ہیں تو بانیٔ پاکستان کے بارے میں اپنے بغض کا اظہار کرنے سے باز نہیں آتے ۔ جب معاملہ قائدؒ کی ذات تک پہنچا تو مجھ سے پھر نہ رہا گیا اور انہیں بتانا پڑا کہ’’پاکستان میں ہر روز کروڑوں لوگ محمد علی جناحؒ صاحب کی بصیرت کو خراجِ تحسین پیش کرتے ہیں اور آزادی جیسی نعمت کا تحفہ دلانے پر (اور آپ سے آزادی دلانا تو قائدؒ کا احسانِ عظیم ہے) ان کیلئے دل سے دعائیں کرتے ہیں۔ آپ نے اپنے باپو مہاتما گاندھی کو قتل کر دیا مگر 67 سال بعد بھی پاکستان میں اگر کوئی شخصیت غیر متنازع ہے اور جس سے تمام پاکستانی دل کی گہرائیوں سے بے پناہ عقیدت رکھتے ہیں تو وہ محمد علی جناحؒ کی شخصیت ہے۔ جو لوگ بھارت کا چکر لگا جاتے ہیں اور یہاں کے مسلمانوں کی بے بسی اور ذلّت دیکھ کر واپس جاتے ہیں وہ قائدؒ کی بصیرت کے اور زیادہ قائل ہوجاتے ہیں۔

ہم نے بڑے تحمل سے بات کرتے ہوئے انہیں کہا "Lets forget the past and accept each other"آپ حضرات کو یہ سن کر خوشی ہو گی کہ ہمارے ہاں بڑی تبدیلی (change of heart) آئی ہے۔ عوام بالغ نظر ہو چکے ہیں اور انڈیا کے ساتھ کشمیر سمیت تمام تنازعات کو مذاکرات سے حل کرنے کے حامی ہیں۔ وہ یورپی ممالک کو دیکھتے ہیں کہ ایک دوسرے کے خلاف کئی برسوں تک برسرپیکار رہے انہوں نے ایک دوسرے کے کروڑوں انسان قتل کئے، ایک دوسرے کے ملک تباہ کر دئیے۔ مگر ماضی کوتاریخ کے اوراق میں دفن کر کے آج وہ بہترین دوست ہیں۔ انہوں نے ایک دوسرے کیلئے سرحدیں کھول دی ہیں اور کرنسی ایک کر لی ہے۔ کیا ہم ان سے کچھ بھی سیکھنے کیلئے تیار نہیں ہیں؟‘‘۔ ہم نے یہ بھی کہا کہ’’ کھی انڈیا کے خلاف جنگ کرنے کے نعرے پر ووٹ لئے جاتے تھے۔ آج انڈیا ہماری انتخابی مہم کا موضوع نہیں رہا۔ جو سیاسی قائد خلوص اور نیک نیتی سے انڈیا کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کا خواہاں ہے اسے سب سے زیادہ ووٹ ملے اور آج وہ ملک کا منتخب وزیر اعظم ہے۔ مگر آپ کے ہاں یہ سوچ کیوں نہیں پنپ سکی ؟ آپ کے ہاں آج بھی انتخابی تقریروں میں پاکستان کے خلاف زہر اُگلا جا رہا ہے۔ انڈیا بڑا ملک ہے، ایسی سوچ آپ کے ہاں پہلے آنی چاہئے تھی۔ ماضی کو بھول کر دوستی کا ہاتھ بڑھانے کا initiativeپہلے آپ کو لینا چاہئے تھا‘‘۔یہ سن کر محفل میں بیٹھے ہوئے کچھ حضرات کہنے لگے کہ" واقعی پاکستان کے لیڈروں اور پاکستانی عوام کی سوچ میں بہت بڑی تبدیلی دیکھنے کو مل رہی ہے۔ انڈین لیڈرشپ کو بھی اسی جذبے کا مظاہرہ کرنا چاہئے اور اسی طرح Reciprocateکرنا چاہیے۔ اگر یہ موقع ضائع کر دیا گیا تو دونوں قوموں کو بہت نقصان اٹھانا پڑے گا‘‘۔

ایک دو حضرات نے ممبئی حملوں اور بھارت میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعات کا ذکر کیا جس پر ہم نے کہا کہ کسی ایک واقعے میں بھی پاکستانی حکومت یا فوج کے ملوث ہونے کی کوئی شہادت نہیں ملی جبکہ ہمارے ہاں بلوچستان اور کراچی میں دہشت گردی کے واقعات میں بھارت کے ملوث ہونے کی واضح شہادتیں موجود ہیں جس سے بھارتی حکومت کی ذہنیت عیاں ہو جاتی ہے۔ انڈیا میں قیام کے دوران ایک دن ہمیں پیشکش ہوئی کہ ’’اگر آپ چاہیں تو آپ کی ملاقات مشہور ہیرو شاہ رُخ ، سلمان خان یا امیتابھ بچن سے کرائی جا سکتی ہے‘‘۔ میں نے کہا ’’بچوں کو اداکاروں سے ملنے کا شوق ہوتا ہے ہمیں تو بالکل بھی نہیں۔ یہ لوگ کوئی زیادہ پڑھے لکھے نہیں ہوتے۔ مکالمے رَٹ کر بول دیتے ہیں اس لئے ان کی گفتگو انتہائی سطحی قسم کی ہوتی ہے۔ان کی نسبت ہم کسی دانشور، رائٹر، دیانتدار سول سرونٹ، سوشل ریفارمر ، کسی بہادر پولیس افسر یا باضمیر صحافی سے ملنے کو ترجیح دیں گے۔ ایسے لوگوں کے پاس علمیّت بھی ہوتی ہے، فلسفہ بھی اور پیغام بھی‘‘۔ فلمی اداکار انڈیا کے ہوں یا پاکستان کے وہ نقلی ہیرو بنتے ہیں قوم کے اصلی ہیرو نہیں ہوتے وہ تو صرف entertainer ہوتے ہیں۔ انسان ذہنی طور پر تھکا ہوا ہوتو entertainment کیلئے انہیں سکرین پر دیکھ سکتا ہے، اس سے زیادہ ان کے ساتھ رابطے کی ہرگز خواہش نہیں ہے۔

کئی سال پہلے جب میں لاہور میں تعینات تھا اسی طرح کے ایک" دبنگ ہیرو" کو کسی کیس کے سلسلے میں لاہور پولیس نے بلا لیا تو ایس پی آفس میں آتے ہی اس نے زاروقطار رونا شروع کر دیا۔ ایک پولیس افسر نے کہا ’’تم تو اکیلے درجنوں پولیس والوں کو قتل کرسکتے ہو۔ مگر یہاں تمہارا یہ حال ہے؟‘‘ ہاتھ باندھ کر کہنے لگا سرجی وہ سب نقلی ہوتا ہے میں تو چڑیا بھی نہیں مار سکتا۔ پورے بھارت میں پاکستان کا کوئی چینل نہیں دیکھا جا سکتا۔ کاروباری اشتہاروں میں کسی پاکستانی مرد یا خاتون کی تصویر نہیں ہے۔ مگر پاکستان کے ہر شہر میں انڈین اداکاراؤں کے اشتہاروں کی بھرمار ہے۔ اب ایک سیاستدان نے ایک ایسے متعصّب بھارتی اداکار کو پاکستان آنے کی دعوت دی ہے جس نے اپنے بیٹے کی شادی پر کسی مسلمان کو نہیں بلایا تھا، جو اپنی بہو کے ساتھ ناچتا ہے اور بہو بیٹی کو سٹیج پر نچوا کر تالیاں بجاتا ہے۔ کوئی باعزت شخص ایسے اداکار سے ملنا بھی گوارا نہ کرے ۔ ایسے اداکار کو دعوت دینا بدترین احساسِ کمتری نہیں تو اور کیا ہے؟واپسی پر’’شتابی‘‘ نام کی ایک تیز رفتار ٹرین کے ذریعے دہلی سے امرتسر کا سفرکیا، انڈیا کی ریلوے سروس بہت بہتر ہو گئی ہے۔ ٹرین کی اَپر کلاس اچھی تھی لیکن ہماری (اچھے وقتوں والی) ریل کار کے مقابلے میں شتابی بہت پیچھے تھی۔ مگر شتابی دیکھ کر اپنی ریلوے کی خرابی دور ہونے کی بیتابی بڑھ گئی ہے۔

بشکریہ روزنامہ "جنگ"

کالم نگار کی رائے سے العربیہ ڈاٹ نیٹ کا متفق ہونا ضروری نہیں ہے

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند