.

’گدھے کی سواری،مشینوں کی مرمت اور گھاس کٹائی میں ماہر نابینا‘

مصر کے پیدائشی نابینا نے عملی زندگی کی منفرد مثال قائم کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یعقوب نادی ایک مصری نوجوان ہے جو پیدائشی طورپرنابینا ہے۔ اس نے عزم اور کام سے محبت کی ایک مثال قائم کی۔ وہ بالائی مصرمیں منیا گورنری کے گاؤں "منہری" میں اپنے باپ دادا کی زمین پر کاشت کاری کرتا ہے۔ یعقوب نادی ایک ایسا نابینا ہے جو ایسے کام کرتا ہے جس میں اسے ذہنی اور جسمانی دونوں طرح کی مشقت کرنا پڑتی ہے۔ مگراس نے اپنی اس جسمانی کمزوری کو اپنی زندگی اور پیشہ ورانہ کاموں کی راہ میں حائل نہیں ہونے دیا۔

نادی نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ وہ پیدائشی طور پر نابینا ہے۔ نادی کے والدین نے گیارہ سال تک اس کے تندرست ہونے کی امید کے ساتھ علاج کی کوششیں جاری رکھیں۔ اس کے خاندان نے اپنے چھوٹے سے گاؤں منیا اور بالائی مصر کی گورنری کے قریب اور دور کے تمام اسپتالوں کے دروازے کھٹکھٹائے۔ یہاں تک کہ وہ طویل سفر طے کرکے علاج کی غرض سے قاہرہ بھی گئے۔ آؒخر کار ڈاکٹروں نے نادی کو لاعلاج قرار دے کر اس کی تمام امیدوں پر پانی پھیر دیا۔

اس نے بتایا کہ میں خدا کے منشا اوراپنی تقدیر پرمُطمئن ہوں۔ میں قدیم مصری اصول "بیکار ہاتھ ناپاک ہے" کو سامنے رکھتے ہوئے 12 سال کی عمر میں اپنے والد کے ساتھ زمین میں کاشت کاری کر رہا ہوں۔ آہستہ آہستہ وہ تمام کام سیکھ لیے جن کی ضرورت تھی۔ نا بینا ہونے کے باوجود میں نے سیکھا کہ درندوں سے کیسے نمٹنا ہے؟ مویشوں کے باڑوں کو کیسے صاف رکھنا ہے؟ آبی گذرگاہوں کوکیسے تیار کرنا ہے؟ بیج پھینکنے کی تاریخیوں،طریقوں، پودوں کے حوالے سے مختلف مراحل میں ان کی دیکھ بھال، فصلوں کی کٹائی، جڑی بوٹیوں اور پودوں کو انتہائی مہارت کے ساتھ کاٹنئ، مختلف زرعی فصلوں کی اقسام سے نمٹنے سمیت بہت کچھ میں نے سیکھا۔

نادی نے اپنے اردگرد پھیلی لہلاتی فصلوں اور کھیتوں کو کی خوبصورتی کو کبھی نہیں دیکھا اس نے عمر بھر رنگوں کو نہیں پہچانا کیونکہ وہ نابینا پیدا ہوا لیکن اسے اس سرزمین، اس کی فصلوں کی خوبصورتی محسوس ہوتی ہے۔ اس کا سورج اور اس کا آسمان جسے وہ اپنے ذہن میں سب سے مشہور مصور کی سب سے خوبصورت پینٹنگ کے طور پر دیکھتا ہے۔

اس پیشے کی مشکل اور اس کے مشکل کاموں کی کثرت اور اس کے لیے درکار درستگی اور محنت، اور زرعی زمینوں اور دیہاتی گھروں سے دوری کے باوجود یعقوب ان تمام کاموں کو انتہائی آسانی اور محبت کے ساتھ انجام دیتا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ یہ میرے لیے بہت آسان ہے۔گدھا مجھے جانتا ہے اور اسے کھیت کے اندر کا راستہ معلوم ہے۔

یعقوب نادی نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کوبتایا کہ وہ آبپاشی کی مشینوں کی خود مرمت کرتا ہے۔ اگراس میں کوئی اچانک خرابی واقع ہو جاتی ہے وہ انہیں درست کرتا ہے۔ مختلف مسائل کو آسانی سے نمٹاتا ہے۔ ان سارے کاموں میں اسے اس کے والد کی سرپرستی حاصل رہی ہے۔