اعمار دبئی کی جموں و کشمیر میں پہلی غیر ملکی سرمایہ کاری کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مقبوضہ کشمیر میں پہلی غیر ملکی سرمایہ کاری کا اعلان کیا گیا ہے۔ دبئی کا اعمار گروپ 60 ملین ڈالر کا شاپنگ اور آفس کمپلیکس تعمیر کرے گا۔

یہ انڈین حکومت کی جانب سے اس علاقے پر اپنا اثرورسوخ بڑھانے کی ایک کوشش ہے جہاں مسلم علیحدگی پسند برسوں سے حکومت کے خلاف برسرپیکار ہیں۔

اعمار گروپ نے ایک سرمایہ کاری سربراہی اجلاس میں اعلان کیا کہ 5 بلین روپے (60.50 ملین ڈالر) کی سرمایہ کاری سے سری نگر میں ایک شاپنگ مال اور کثیر مقصدی تجارتی ٹاور شامل ہوں گے۔

انڈیا نے طویل عرصے سے ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کی کوشش کی لیکن تین دہائیوں سے جاری شورش کی وجہ سے اس علاقے میں بہت کم کامیابی ملی۔

اعمار پراپرٹیز کے سی ای او امیت جین نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ اس سے علاقے میں سرمایہ کاری پر اثر پڑے گا۔

"یہ شروعات ہے، ہمیں مزید لوگوں کو متاثر کرنا چاہیے۔۔۔ یہ ایک ملین مربع فٹ کا مال ہے جس میں 500 دکانیں ہیں اور تقریباً 7,000 سے 8,000 ملازمتیں پیدا ہوں گی۔" جین نے "مال آف سری نگر" کے سنگ بنیاد کی تقریب کے بعد کہا۔

اعمار، دنیا کے سب سے اونچے ٹاور، برج خلیفہ کا بلڈر، دبئی کا سب سے بڑا لسٹڈ ڈویلپر ہے۔ دبئی حکومت اپنے خودمختار دولت فنڈ کے ذریعے ڈویلپر میں اقلیتی حصص کی مالک ہے۔

کشمیر میں اعلیٰ منتظم منوج سنہا نے کہا کہ اس منصوبے سے غیر ملکی سرمایہ کاروں میں اعتماد پیدا ہوا ہے۔

کشمیر کی متنازعہ حیثیت کے سبب یہاں سرمایہ کاری کے لیے رغبت کم رہی ہے۔ یہ اقوام متحدہ میں دنیا کا قدیم ترین تنازع ہے۔

اگست 2019 میں، انڈین وزیر اعظم نریندر مودی نے ریاست جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کر دیا جس کے تحت پاکستان کے ساتھ 70 سال سے پرانے تنازع کے مرکز اس خطے پر اپنی گرفت مضبوط کرنے اور اسے مزید قریب سے مربوط کرنے کی کوشش کی گئی۔

مظاہروں اور احتجاج کو دبانے کے لیے مواصلاتی بلیک آؤٹ اور دیگر پابندیاں نافذ کی گئیں جس سے عوامی نفرت کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہوا۔

مقبول خبریں اہم خبریں