.

امریکی کامیڈین اور پروڈیوسر''طالبان'' پر فلم بنائیں گی

ٹینا فے نے صحافیہ کیم بارکر کی یادداشتوں پر مبنی کتاب کا انتخاب کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا کی معروف مزاحیہ اداکارہ اور پروڈیوسر ٹینا فے نے پاکستان اور افغانستان میں پیشہ وارانہ فرائض کی انجام دہی کے سلسلے میں مقیم رہنے والی صحافیہ کیم بارکر کی یادداشتوں پر مبنی کتاب ''دی طالبان شفل'' پر فلم بنانے کا اعلان کیا ہے۔

کیم بارکر ''پروپبلکا'' کی رپورٹر رہی تھیں اور وہ دی شکاگو ٹرائبیون کی 2004ء سے 2009ء تک جنوبی ایشیا میں بیورو چیف رہی تھیں۔ اس دوران انھیں پاکستان اور افغانستان میں رونما ہونے والے اہم واقعات کو قریب سے دیکھنے اور انھیں رپورٹ کرنے کا موقع ملا۔

اس عرصے کے دوران ہی دسمبر 2007ء میں پاکستان کی سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کا راول پنڈی میں بم دھماکے میں قتل ہوا تھا اور افغانستان میں 2005ء میں پارلیمانی انتخابات منعقد ہوئے تھے۔ امریکا کے زیر قیادت نیٹو اتحاد کی فوجوں کی طالبان مزاحمت کاروں کے خلاف جنگ جاری رہی تھی۔ بارکر ان واقعات کو اپنے آنکھوں کے سامنے رونما ہوتے ہوئے دیکھا اور پھر ان یادداشتوں کو قلم بند کر کے کتاب کی صورت میں شائع کر دیا۔

بارکر کا اپنے بوائے فرینڈ کے ساتھ خطے کے ان دو جنگ زدہ ممالک میں رونما ہونے والے واقعات کے بارے میں خبریں دینے کا مقابلہ بھی لگا رہتا تھا اور انھوں نے اپنی یادداشتوں میں خبر نگاری کے اس مضحکہ خیز مقابلے کا احوال بھی بیان کیا ہے۔

نیویارک ٹائمز نے ان کی یادداشتوں پر تبصرے میں خاتون صحافیہ کو ٹینا فے کی طرح کے کردار کی طرح پیش کیا ہے اور وہی اب ان کی یادداشتوں کا فلمی ورژن بڑی سکرین پر پیش کررہی ہیں۔

ٹینا فے بیک وقت مزاحیہ اداکارہ، لکھاری اور پروڈیوسر ہیں۔ وہ اب تک اپنے فن کے اعلیٰ مظاہرے پر کئی ایک اعزازات اور ایوارڈز جیت چکی ہیں۔ این بی سی پر ان کی خاکہ کامیڈی سیریز ''سیچرڈے نائٹ لائف'' تو بہت مقبول ہوئی تھی۔

ٹینا فے نے اپنی پروڈکشن کمپنی کے تحت صحافیہ کی یادداشتوں پرمبنی فلم بنانے کا فیصلہ کیا ہے اور '' 30 راک'' شو کو چلانے والے رابرٹ کارلاک کو مسودہ لکھنے کی ذمے داری سونپی ہے۔ تاہم انھوں نے اس فلم کے کرداروں اور اس کی ریلیز کی تاریخ کے بارے میں کوئی اعلان نہیں کیا ہے۔