.

میشل اوباما کا سعودی خاتون کے لئے"بہادرخاتون" کا خطاب

مہا المنیف کی گھریلو اور بچوں پر تشدد کے خلاف خدمات کا اعتراف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں بچوں سے بدسلوکی اور گھریلو تشدد کے خلاف سرگرم خاتون ڈاکٹر مہا المنیف کو امریکی خاتون اول میشل اوباما اور وزارت خارجہ کی جانب سے دنیا کی "بہادر خاتون" کا خطاب دیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مہا منیف کی خدمات کےاعتراف میں نیویارک میں منعقدہ ایک تقریب میں میشل اوباما اور کئی دوسرے اہم امریکی عہدیدار موجود تھے۔ اس موقع پر مہا منیف کی دفاع انسانی حقوق، حقوق نسواں، بچوں کے حقوق، مساوات اور سماجی بہبود کے شعبوں میں دس سالہ خدمات پرانہیں خراج تحسین پیش کیا گیا۔

خیال رہے کہ امریکا کی جانب سے یہ لقب اس سے قبل دنیا کی نو دیگرخواتین کو بھی دیا جا چکا ہے۔ اب یہ اعزاز سعودی خاتون ڈاکٹر کے حصےمیں آیا ہے۔

خیال رہےکہ ڈاکٹر مہا ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ خاتون سرجن اور چائلڈ اسپیشلسٹ بھی ہیں۔

انہوں نے شاہ سعود یونیورسٹی سے طب اور سرجری میں گریجویشن کے بعد امریکی بورڈ سے چائلڈ پروٹیکشن اور انسداد تشدد کے علاوہ وبائی امراض [ایپی ڈیمیالوجی] کے علاج کی ڈگری بھی لے رکھی ہے۔ مہا امریکی ایسوسی ایشن برائے اطفال کی بھی ممبر ہیں۔

مہا المنیف سعودی عرب میں بھی کئی اہم عہدوں پر کام کر چکی ہیں۔ حال ہی میں انہیں نیشنل فیملی سیفٹی پروگرام کی ڈائریکٹر مقرر کیا گیا تھا۔ وہ عرب نیٹ ورک برائے انسداد ایذا رسانی اطفال کی بھی رکن اور گھریلو تشدد کے خلاف سرگرم کمیٹی کی بھی ممبر ہیں۔ ڈاکٹر مہا کو تحفظ خواتین و اطفال کے شعبے میں ان کی خدمات کے اعتراف کے طور پر لاتعداد انعامات اور تمغے بھی حاصل کر چکی ہیں۔

بچوں اور خواتین کی بہبود اور ان کے حقوق کے لیے کام کرتے ہوئے انہوں نے کئی بار گھریلو تشدد کے اعداد وشمار جمع کرنے کے لیے آبزرویٹری کے قیام اور خاندانی تشدد کے موضوع پر سعودی جامعات میں ریسرچ سینٹر کےقیام کا بھی مطالبہ کیا ہے۔