.

مصر: خواتین کے لئے فوجی سروس لازم قرار دی جائے

"آئین میں مرد و زن اپنے حقوق و فرائض میں مساوی ہیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک مصری دوشیزہ نے قاہرہ کی عدالت میں درخواست دائر کی جس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ عدالت وزیر دفاع فیلڈ مارشل عبدالفتاح السیسی کو ہدایت کرے کہ وہ مردوں کی طرح 18 سال کی عمر کو پہنچنے والی تمام لڑکیوں کی فوجی سروس کو بھی لازمی قرار دیں۔

العربیہ نیوز چینل کے برادر ٹی وی نیٹ ورک 'الحدث' کی رپورٹ کے مطابق یہ درخواست امانی عبداللہ عبدالقادر نامی لڑکی کی جانب سے دائر کی گئی ہے۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ مصر کے نئے دستور میں مرد و زن کے لیے تمام شعبوں میں حقوق وفرائض کے مساوات کا اصول تسلیم کیا گیا ہے۔ لیکن ملٹری سروس کے حوالے سے فوجداری قانون کی دفعہ 127 مجریہ 1980ء میں مساوات کے اس اصول کی نفی کی گئی ہے۔

درخواست گذار خاتون کا کہنا کہنا ہے کہ مصری دستور کے آرٹیکل 11 میں حقوق وفرائض میں مرد زن کو مساوی قرار دیا گیا ہے۔ لہٰذا اسی اصول کے تحت وہ مردوں کی طرح عورتوں کی لازمی فوجی سروس کا مطالبہ کر رہی ہیں۔