ممبئی میں ڈرون کے ذریعے پیزا ہوم ڈلیوری کا آغاز

پولیس نے ڈرون اڑانے کے واقعے کو حساس قرار دے دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بھارت کے سب سے بڑے شہر ممبئی میں یہ آسمان سے اتارے گئے من و سلوی تو نہیں ہوں گے لیکن یہ امکان ضرور ہے کہ جب بغیر پائلٹ کے تیز رفتار پرواز کرنے والے ڈرون طیاروں کے ذریعے پیزا ، کیک اور اس طرح کے دیگر ماکولات بھجوانے کا پہلی مرتبہ سوچا گیا ہو گا تو من و سلوی کا حوالہ ان سوچنے والوں کے ذہنوں میں ضرور آیا ہو گا۔

ممبئی کے ایک ریستوران نے فی الحال ان ڈرونز کے ذریعے پیزے گھر گھر پہنچا کر اپنے گاہک بڑھانے کے تصور کی آزمائش کا سوچا ہے کہ یہ خیال کس حد تک قابل عمل ہے۔

ممبئی کے جنوب میں واقع فرانسسکو پیزیریہ نامی ریستوران کے سٹاف کیلیے یہ خبر بڑی خوشگوار اور متاثر کن تھی کہ ممبئی میں یہ اپنی طرز کا پہلا واقعہ ہے۔ ریستوران کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ پیزا کی ہوم ڈلیوری کے لیے اس جدید ترین اور تیز ترین سہولت کی آزمائش ابتدائی طور پر کامیاب رہی ہے۔ ریستوران انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ''ہم نے اپنے ایک کسٹمر کو ڈیڑھ کلو میٹر کے فاصلے پر کامیابی سے پیزا پہچایا ہے۔''

ریستوران مالکان کے مطابق آج جو چیز ایک تجربے سے شروع ہوئی ہے آئندہ چار پانچ برسوں کے دوران عام پریکٹس میں ہو گی۔ واضح رہے ممبئی میں پیزا سروس کیلیے ایک ڈرون طیارہ تقریبا دو ہزار امریکی ڈالر میں پڑا ہے۔ فرانسسکو پیزیریہ نے ڈرون کے ذریعے اس ابتدائی پیزا ڈلیوری کی ویڈیو یو ٹیوب پر بھی اپ لوڈ کر دی ہے ۔ جس میں ایک ڈرون پیزا بکس کے ہمراہ پرواز کر رہا ہے۔

ریستوران انتظامیہ کے ایک ذمہ دار راجانی کا کہنا ہے کہ ڈرون کی مدد سے پیزا ہوم ڈلیوری، موٹر سائیکل سواروں کے ذریعے پیزا بھجوانے کے مقابلے میں سستی بھی پڑے گی۔

دوسری جانب ممبئی پولیس نے ایک ریستوران کی طرف سے بغیر پیشگی اطلاع کے ڈرون اڑانے کے واقعے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ واضح رہے ممبئی میں ڈرون یا اس طرح کے دوسرے جہاز نجی طور پر اڑانے کی ممانعت ہے۔

پولیس کے ایڈیشنل کمشنرمسٹر پانڈے کا کہنا ہے کہ'' ہم ایسی کسی بھی چیز کے بارے میں بڑے حساس ہیں جو ریموٹ کنٹرول سے ممبئی میں اڑائی گئی ہو۔''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں