اسرائیلی مصنوعات فروخت کرنے والے برطانوی سٹور پر حملہ

مشتعل ھجوم نے سُپر سٹور میں فروخت ہونے والا سامان توڑ ڈالا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

غزہ کی پٹی پر اسرائیلی فوج کی بربریت کے خلاف برطانیہ کے علاقے برمنگھم میں احتجاجی ریلی کے شرکاء نے اسرائیلی مصنوعات فروخت کرنے والے ایک سپر سٹور پر دھاوا بول دیا اور اسٹور میں گھس کر توڑ پھوڑ کے ساتھ ملازمین کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یہ واقعہ گذشتہ روز اس وقت پیش آیا جب فلسطین میں اسرائیلی جارحیت کے خلاف احتجاج کرنے والے دسیوں افراد اسرائیلی مصنوعات کے بائیکاٹ کا مطالبہ کرتے ہوئے "ٹیسکو" نامی ایک سپر اسٹور کی طرف بڑھتے ہوئے اس پر حملہ کر دیا۔ پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ان پر وحشیانہ لاٹھی چارج کیا تاہم اس کشمکش میں اسٹور میں بری طرح توڑ پھوڑ بھی ہو گئی تھی۔ مشتعل مظاہرین نے اسٹور کام کرنے والے ملازمین کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا۔

خیال رہے کہ "ٹیسکو" برطانیہ میں سپر مارکیٹ کی ایک وسیع چین ہے جس کی ملک بھر میں دسیوں شاخیں قائم ہیں۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق برطانیہ میں خرچ ہونے والے 10 آسٹریلوی پاؤنڈز میں سے ایک پاؤنڈ "ٹیسکو" کے حصے میں جاتا ہے۔ اس سپرا سٹور چین کی کل مالیت 16 ارب ڈالر بتائی جاتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق لندن سے شمال میں 200 کلومیٹر کے فاصلےواقع برمنگھم میں تقریبا 100 افراد ٹیسکو سٹور کے باہر جمع ہوئے اور انہوں نے غزہ پر اسرائیلی حملے کےخلاف صہیونی ریاست کی مصنوعات کے بائیکاٹ کے حق میں نعرے لگانے شروع کیے، تاہم جلد ہی احتجاج مشتعل ھجوم کی شکل اختیار کر گیا اور مشتعل مظاہرین نے اسٹور میں گھس کر اس کی توڑ پھوڑ شروع کردی۔

سٹور میں موجود گاہک اور ملازمین بھی اپنی جانیں بچانے کے لیے بھاگ کھڑے ہوئے۔ تاہم پولیس نے فوری کارروائی کرکے مظاہرین کو سٹور سے باہر نکالا جس کے بعد مظاہرین منتشر ہو گئے تھے۔ پولیس نے ایک شخص کو حراست میں بھی لیا ہے تاہم لاٹھی چارج کے دوران توڑ پھوڑ کرنے والے کئی افراد فرار ہو گئے تھے۔ خفیہ کیمروں کی مدد سے ان کی شناخت کے بعد تلاش کا سلسلہ جاری ہے۔

برطانیہ میں فلسطین کلب کے چیئرمین زیاد العالول نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے برمنگھم واقعے کی شدید مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ ایک جمہوری ملک میں احتجاج ہر شہری کا حق ہے مگراحتجاج کی آڑ میں توڑ پھوڑ اور عوامی املاک کو نقصان پہنچانے کا کوئی جواز بھی نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیل نے غزہ کی پٹی میں جنگی جرائم کا ارتکاب کیا اور بربریت کا مظاہرہ کرتے ہوئے دو ہزار فلسطینی بچوں، خواتین اور معصوم شہریوں کو شہید کیا۔ اسرائیل کی اس جارحیت کےخلاف ہم برطانیہ میں کئی بار پرامن احتجاج کر چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے احتجاج اور اسرائیلی مصنوعات کے بائیکاٹ کی مہمات اب بھی جاری ہیں لیکن ہم پرامن رہتے ہوئے قانون کے دائرے میں اپنی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ فلسطین میں اسرائیل کے جنگی جرائم کو عالمی سطح پربے نقاب کرنا ہم سب کا فرض ہے۔ تاہم ہمارے اس فرض کی ادائی کے دوران کسی دوسرے کی حق تلفی نہیں ہونی چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں