.

واہ! کیا جیل ہے، قیدی کی شادی، سیل کی آرائش

قیدی ساتھی شادی میں شرکت کے لیے جیل سے باہر جا سکیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے صوبہ قسیم کی ایک جیل کے قیدی کی تقریب شادی کی خاطر اس کے سیل کو حجلہ عروسی کی طرح سجا دیا گیا ہے۔ قیدی کی شادی کے تمام لوازمات فراہم کرنے اور اس کی خوشی کو دوبالا کرنے کے لیے یہ اہتمام خود سعودی جیل حکام نے کیا ہے۔

سعودی جیلوں کے نظام میں یہ سہولت موجود ہے کہ قیدیوں کو شادی کی اجازت دی جائے تاکہ وہ قید اپنی اصل سزا کے باوجود دوسرے بنیادی حقوق سے محروم نہ رہیں۔ اسی وجہ سے شادی کی تیاریوں میں مصروف اس قیدی کے ساتھ جیل انتظامیہ بھی پورا ساتھ دے رہی ہے۔

قیدی کا سیل اس طرح ڈیکوریٹ کیا گیا ہے کہ اس کے کمرے میں ایک صوفہ، سنٹرل ٹیبل اور دو کارنر ٹیبلز کے ساتھ رکھا گیا ہے۔ سیل میں لائٹنگ کا بھی مدھم روشنیوں کے ساتھ خوابناک ماحول بنایا گیا ہے۔ نیز رنگ برنگے گلدستوں سے ماحول کو آراستہ کیا گیا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ اس سعودی قیدی کی عمر تیس سال کے پیٹے میں ہے۔ جیل کے ایک ذمہ دار صالح الکورزئِی نے کہا '' اس تقریب کی مناسبت سے سیل کی تزئین و آرائش کا اہتمام کیا گیا ہے۔''

صالح الکورزئی نے مزید کہا '' اگر دوسرے قیدی بھی اس شادی میں شرکت کے لیے جیل سے باہر جانا چاہیں گے تو انہیں بھی اس کی اجازت ہو گی ، صرف ایسے قیدی نہیں جا سکیں گے جو سزا یافتہ ہیں یا ان کے مقدمات کی سماعت کا مسئلہ ہے۔

جیل حکام کے مطابق سعودی جیلوں میں بند افراد کی صحت، سلامتی اور آرام کا پورا اہتمام کیا جاتا ہے اور قیدیوں کو بطور انسان بہتر سلوک کا حق دار سمجھا جاتا ہے۔