.

بھارتی ٹی وی میزبان کو اسٹیج پر تھپڑ پڑ گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت کی ٹیلی ویژن کی ایک مشہور میزبان اور ماڈل گوہر خان کو براہ راست نشر ہونے والے شو کے دوران نیم عریاں لباس پہننے پر ناظرین میں بیٹھے ایک شخص نے تھپڑ جڑ دیا ہے۔ان صاحب کی اس حرکت کے خلاف ٹویٹر پر سخت ردعمل کا اظہار کیا جارہا ہے۔

گوہر خان ممبئی میں گانے کے ایک فائنل مقابلے کی میزبانی کررہی تھیں۔اس دوران ایک چوبیس سالہ نوجوان عقیل احمد نے انھیں دھمکی دی اور براہ راست نشر ہونے والے شو کے دوران ہی وہ ان پر حملہ آور ہوگیا اور اس نے تھپڑ رسید کردیا۔

عقیل ملک نے ممبئی پولیس کے روبرو بیان میں اپنی اس حرکت کا دفاع کیا ہے اور کہا ہے کہ گوہر خان کو ایک مسلم کی حیثیت سے اس طرح کا قابل اعتراض لباس نہیں پہننا چاہیے تھا۔

اس واقعہ کے فوری بعد اس نوجوان کو گرفتار کر لیا گیا تھا اور اس پر تعزیرات ہند کی دفعہ 354 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔موسیقی کے مقابلے کی جگہ کی سکیورٹی کے بارے میں بھِی اب سوال اٹھائے جارہے ہیں اور یہ کہا جارہا ہے کہ عقیل ملک ہال اور اس کے باہر ڈھائی سو محافظوں کی موجودگی کے باوجود گوہر خان تک پہنچنے اور ان پر حملہ کرنے میں کیسے کامیاب ہوگیا تھا۔

اس واقعہ کے بعد ٹویٹر کے صارفین گوہر خان کے دفاع میں کمر بستہ ہوگئے ہیں اور وہ ان کے حق میں مختصر تحریریں پوسٹ کررہے ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ ماڈل کو اپنی پسند کے مطابق لباس پہننے کا حق حاصل ہے۔

ایک صاحب ڈگ وجے سنگھ نے عقیل ملک کے گوہر خان پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان صاحب یا بنیاد پرست ذہنیت کے حامل کسی بھی شخص کی مذمت اور مخالفت کی جانی چاہیے۔بعض دوسروں نے لکھا ہے کہ گوہر خان یا کسی بھی اورعورت کو اپنی پسند کا لباس پہننے کی آزادی حاصل ہے۔