.

خواتین کو فٹ بال میچ سے دور رکھنے کے لیے سخت سکیورٹی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ساحلی شہر جدہ میں حکام نے خواتین کو فٹ بال میچ دیکھنےسے روکنے کے لیے اسٹیڈیم کے ارد گرد سکیورٹی کے غیر معمولی سخت انتظامات کیے ہیں۔

جدہ کے شاہ عبداللہ اسپورٹس سٹی میں واقع جواہرہ اسٹیڈیم میں ولی عہد کپ فٹ بال ٹورنا منٹ کے سلسلے میں مقامی ٹیم الاتحاد اور دارالحکومت الریاض کے الحلال کلب کے درمیان میچ کھیلا جانا تھا اور یہ توقع کی جارہی تھی کہ اس میچ کو دیکھنے کے لیے شائقین کی ایک بڑی تعداد اسٹیڈیم اُمڈ آئے گی لیکن حکام اس امر کو یقینی بنانے کے لیے کوشاں تھے کہ کوئی بھی خاتون یہ میچ دیکھنے کے لیے اسٹیڈیم میں داخل نہ ہونے پائے۔

سعودی روزنامے مکہ میں بدھ کو شائع شدہ ایک رپورٹ کے مطابق حکام نے ساٹھ ہزار افراد کی گنجائش والے اس اسٹیڈیم کے مرکزی دروازوں پر سکیورٹی سخت کردی تھی اور تمام شائقین کو اندر داخل ہونے کے لیے شناختی کارڈ دکھانا پڑا ہے۔

یہ غیر معمولی اقدام اسی ماہ ایک خاتون کے چُپکے سے اسٹیڈیم میں داخلے کے بعد کیا گیا تھا۔یہ خاتون محافظوں کو چکمہ دے کر اندر داخل ہونے میں کامیاب ہوگئی تھی اور الاتحاد اور الشباب کلبوں کے درمیان میچ دیکھنے کے لیے اسٹیڈیم کے ایک کونے میں الگ تھلگ بیٹھ گئی تھی۔

اس دوران محافظوں کو اس کی موجودگی کا پتا چل گیا تھا اور حکام نے اس کو پوچھ تاچھ کے لیے پولیس کے حوالے کردیا تھا۔اس خاتون نے تفتیش کاروں کو بتایا تھا کہ وہ خواتین پرعاید میچ دیکھنے کی پابندی سے آگاہ نہیں تھی۔اس کی عمر بیس،تیس سال کے درمیان ہوگی۔اس کا کہنا تھا کہ اس کو فٹ بال میچ دیکھنے کے لیے ٹکٹ کی آن لائن خریداری میں کوئی دشواری پیش نہیں آئی تھی۔

وہ صبح سویرے ہی اسٹیڈیم پہنچ گئی تھی اور اس نے اپنے لیے ایسی جگہ کا انتخاب کیا تھا جہاں کسی کی اس پر نظر نہ پڑے۔اس کی ایک مختصر ویڈیو بھی آن لائن پوسٹ کی گئی ہے۔اس میں اس کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ہے اور وہ موبائل فون پر باتیں کرتی نظر آرہی ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب نے خواتین کے کھیلوں کے مقابلے دیکھنے سے متعلق سخت پالیسی اختیار کررکھی ہے اور مقامی خواتین کو فٹ بال یا کسی دوسرے کھیل کا میچ دیکھنے کی اجازت نہیں دی جاتی ہے۔البتہ اگر غیرملکی خواتین میچ دیکھنا چاہیں تو انھیں اس کے لیے مجاز حکام سے اجازت نامہ لینا پڑتا ہے۔نیز اس کی ایک شرط یہ ہے کہ دونوں ٹیموں میں سے ایک ان کے آبائی وطن کی ہو۔سعودی عرب میں فٹ بال کا کھیل بہت مقبول ہے اور شائقین برطانوی ،اطالوی اور ہسپانوی لیگوں کے میچوں میں گہری دلچسپی لیتے ہیں۔