.

فلسطینی سانتا کلاز کا بیت لحم میں انوکھا 'مظاہرہ'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطینی مظاہرین نے کرسمس کی آمد کے موقع پر مقبوضہ مغربی کنارے میں حضرت عیسی علیہ السلام کی جائے پیدائش اور تاریخی شہر بیت لحم میں سانتاکلاز کو سوانگ رچا کر ایک پرامن مارچ کا انعقاد کیا۔

فلسطینی نیوز ایجنسی 'وفا' کے مطابق سانتا کلاز نے پرامن مظاہرے کا اہتمام کیا اور شہر کے داخلی راستے پر بچوں میں تحائف تقسیم کئے۔

مظاہرے کا آغاز تو پرامن تھا مگر بعد میں اسرائیلی فوج کی مداخلت کے بعد اس کا اختتام مظاہرین اور اسرائیلی فوج کے درمیان جھڑپوں پر ہوا۔

انسانی حقوق کے لئے کام کرنے والی اسرائیلی تنظیم 'بتسلیم' کے مطابق "اسرائیلی فوجیوں اور بارڈر پولیس نے مظاہرین کو نشانہ بنانے کے لئے ان پر براہ راست آنسو گیس کے گرینیڈ پھینکے۔ ایسا اقدام بین الاقوامی قانون کی صریح خلاف ورزی ہے۔

اس سے پہلے بھی ماہ دسمبر کے آغاز پر مغربی کنارے کے اس شہر میں کرسمس کی مناسبت سے منگر سکوائر پر کرسمس کا روایتی درخت روشن کیا اور آتشبازی بھی کی گئی تھی۔

اسرائیل کے زیر تسلط مغربی کنارے اور غزہ میں چار ملین مسلمانوں کے درمیان 17000 ہزار کیتھولک عیسائیوں سمیت پچاس ہزار فلسطینی مسیحی آباد ہیں۔