.

جرمن آلاپ گائیک امریکا نے دہشت گرد قرار دے دیا

ڈینس کسپیٹ المعروف ابو طلحہ داعش کے اہم رکن ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے مشہور جرمن آلاپ گائیک ڈینس کسپیٹ کا نام عالمی دہشت گردوں کی فہرست مین شامل کر لیا ہے۔ کسپیٹ پر الزام ہے کہ انہوں نے دولت اسلامی عراق و شام [داعش] کی صفوں میں بطور جنگجو شمولیت اختیار کی۔

ایک زمانے میں برلن میں آلاپ گائیک کے طور پر مشہور 39 سالہ ڈینس کو اب ابو طلحہ المانی کے نام سے جانا جاتا ہے اور ان کا شمار داعش کی صفوں میں موجود چنیدہ یورپی جنگجوئوں میں ہوتا ہے۔ اقوام متحدہ کی فہرست میں ان کا نام پہلے ہی القاعدہ کے حامی کے طور پر درج ہے۔

امریکا کی جانب سے کسپیٹ کا نام عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کئے جانے کے نتیجے میں امریکی کنٹرول میں اس کے تمام اثاثے منجمد کر دئیے جائیں گے اور اس سے کسی بھی قسم کے لین دین پر پابندی ہو گی۔

کسپیٹ نے 2012ء میں داعش میں شمولیت اختیار کی تھی اور گروپ کی مختلف وڈیوز میں کافی موقعوں پر نظر بھی آیا تھا۔ ان میں نومبر میں سامنے آنے والی ایک ایسی وڈیو بھی شامل ہے جس میں وہ کسی نامعلوم داعش مخالف کا کٹا ہوا سر ہاتھ میں تھامے کھڑا تھا۔"

امریکی وزارت خارجہ کا کہنا ہے "کسپیٹ داعش کو مطلوب غیر ملکی جنگجوئوں کی بہترین مثال ہے۔ داعش کو ایسے ہی افراد کی ضرورت ہوتی ہے جو اپنے ممالک میں جرائم کی دنیا میں داخل ہو کر پھر عراق اور شام میں سفر کرتے ہیں تاکہ ان ممالک کے شہریوں کے خلاف کہیں بدتر جرائم کے مرتکب ہو سکیں۔"

کسپیٹ نے داعش کے سربراہ اور 'خلیفہ' ابوبکر البغدادی کے ہاتھ پر بیعت کر رکھی ہے اور وہ تنظیم کے لئے جرمن جنگجو بھرتی کرنے والی ٹیم کے سربراہ ہیں۔

جرمن پراسیکیوٹرز نے کسپیٹ اور دیگر غیر ملکی جنگجوئوں کے خلاف تحقیقات کا اغاز کر دیا ہے۔