امریکی صدر اوباما کی دادی کی عمرہ کے لیے مکہ آمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی صدر براک اوباما کی دادی امّاں سارہ عمر نے حال ہی میں حجاز مقدس میں عمرہ ادا کیا ہے اور اس دوران انھوں نے خاتم الانبیاء حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مقدسہ سے متعلق ایک نمائش بھی ملاحظہ کی ہے۔

سارہ عمر ضعیف العمر ہوچکی ہیں اور اس وقت ان کی عمر نوّے سال سے زیادہ ہے۔وہ اپنے بیٹے سعید اور پوتے موسیٰ اوباما کے ہمراہ کینیا سے عمرے کی ادائی کے لیے مکہ مکرمہ آئی تھیں۔

انھوں نے نبی اکرم صلی علیہ وسلم کی زندگی سے متعلق نمائش ملاحظہ کرنے کے بعد اس کو اسلام کی اعتدال پسند تعلیمات کی ایک اچھی مثال قرار دیا ہے۔سعودی روزنامے عرب نیوز نے ان کا یہ بیان نقل کیا ہے جس میں انھوں نے کہا:''مجھے یہ نمائش دیکھ کر بہت خوشی ہوئی ہے۔اسلام کی جدید طریقے سے تشہیر کی یہ ایک اچھی مثال ہے۔اس میں سائنسی انداز میں مستند دستاویزات کو پیش کیا گیا ہے''۔

عربی روزنامے اخبار کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر اوباما کی دادی جان نمائش ک؛و دیکھتے ہوئے اپنے جذبات پر قابو نہ رکھ سکیں اور ان کی آنکھوں سے آنسو رواں ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ براک اوباما خود عیسائی مذہب کے پیروکار ہیں مگران کے کینیائی نژاد والد مسلمان تھے۔ان کی قبر پر لگے کتبے سے بھی اس امر کی تصدیق ہوتی ہے کہ انتقال کے وقت وہ مسلمان ہی تھے لیکن اوباما کا کہنا ہے کہ ان کے کینیائی باپ اور امریکی والدہ عقیدے کے اعتبار سے پکّے مسلمان نہیں تھے۔ان کی والدہ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ عیسائی تھیں اور ان کی پرورش ان کی نانی نے کی تھی۔وہ اپنی بالغ عمری میں عیسائیت کی جانب مائل ہوگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں