.

مصری ارب پتی کا شامی مہاجرین کے لیے جزیرہ خریدنے کا اعلان

شامی خاندان کو سمندر میں ڈبونے میں ملوث چار افراد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تُرکی کے ساحل سے ملنے والی شامی بچے کی نعش نے اپنے پرائے سب کو دکھی کردیا ہے۔ بچے کے سمندر میں منہ کے بل گری نعش کو دیکھ کر مصرکے ایک ارب پتی کاروباری شخصیت نجیب ساویرس کا دل بھی پسیج گیا جس کے بعد انہوں نے شامی پناہ گزینوں کی عارضی آبادکاری کے لیے ایک جزیرہ خریدنے کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق نجیب ساویرس نے اٹلی اور یونان کی حکومتوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنے ہاں آنے والے شامی پناہ گزینوں کو عارضی قیام کی سہولت مہیا کریں۔ ساتھ ہی انہوں نے دونوں ملکوں کی حکومتوں سے توقع ظاہر کی ہے کہ وہ پناہ گزینوں کی آباد کاری کے لیے ایک جزیرہ مختص کرنے پر اتفاق کریں گے تاکہ شام سے نقل مکانی کرنے والوں کو وہاں پر رہائش مہیا کی جاسکے۔

نجیب ساویرس نے گذشتہ روز اپنے "ٹویٹر" اکاؤنٹ پر لکھا کہ "میں شامی پناہ گزینوں کی بہبود کے لیے ایک جزیرہ خریدنے کا خواہش مند ہوں۔ مجھے توقع ہے کی اٹلی اور یونان کی حکومتیں میری اس خواہش کی تکمیل میں میری مدد کریں گی اور دونوں میں سے کوئی ایک ضرور مجھے ایک جزیrہ فروخت کر دے گی۔"

خیال رہے کہ نجیب ساویرس کا شمار نہ صرف مصر بلکہ عرب دنیا کی دولت مند شخصیات میں ہوتا ہے۔ ساویرس ٹیلی کمیونیکیشن کمپنی "اورسکام" کے مالک ہیں۔ اس کےعلاوہ مصر میں ان کا "ON Tv" کے نام سے ایک ٹیلی ویژن چینل بھی ہے۔ انہوں نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ پر اپنی ٹویٹ میں لکھا کہ "ترکی کے ساحل سے ملنے والے ایک پناہ گزین شامی خاندان کے معصوم بچے کی نعش نے میرے رونگٹے کھڑے کردیے ہیں۔ شامی پناہ گزین موت اور مصیبتوں سے گذر رہے ہیں۔ کوئی باضمیر انسان بچے کی تصویر دیکھنے کے بعد اپنے جذبات پر قابو نہیں رکھ سکتا۔ ویسے تو ہم روزانہ ہی شامی پناہ گزینوں کی سمندرمیں اموات کی خبریں پڑھتے ہیں مگراب ان خبروں پر خاموش رہنے کا وقت نہیں رہا ہے۔ اوندھے منہ سمندر کے کنارے پڑے دو سالہ شامی بچے کی لاش دنیا کو جھنجھوڑنے کے لیے کافی ہے۔"

رپورٹ کے مطابق دو ارب نوے کروڑ ڈالرز کے مالک مصری صاحب ثروت نے "CBC" ٹی وی کے پروگرام "ممکن" میں ٹیلیفون پر بات کرتے ہوئے اس امر کی تصدیق کی کہ وہ یورپی ملکوں میں شامی پناہ گزینوں کےلیے ایک جزیرہ خریدنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب ہم ایک صحراء کو شہر بنا سکتے ہیں۔اس میں زندگی کی تمام بنیادی سہولتیں مہیا کر سکتے ہیں تو ہمیں شامی پناہ گزینوں کے لیے کسی جزیرے کوآباد کرنے میں کوئی امر مانع نہیں ہونا چاہیے۔

ترکی میں مشتبہ انسانی اسمگلر گرفتار

ترکی سے شامی پناہ گزینوں کو یورپی ملکوں کی طرف اسمگل کرنے کے الزام میں پولیس نے چار مشتبہ اسمگلروں کو حراست میں لیا ہے۔ حراست میں لیے گئے شامی باشندوں میں سمندر میں ڈوب کرجاں بحق ہونے والے شامی کرد بچے ایلان کردی اور اس کے خاندان کو اسمگل کرنے میں ملوث عناصر بھی شامل ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ترکی پولیس نے "موگلا" ریاست کے "بودروم" شہر میں چار مشتبہ انسانی اسمگلروں کو حراست میں لیا ہے۔ مبینہ طور پر ان کا تعلق ایلان کردی اور اس کے خاندان کے ساتھ پیش آئے حادثے سے بھی ہے۔

العربیہ کے نامہ نگار زیدان زنکلو نے بتایا کہ حراست میں لیے گئے چاروں شامی غیر قانونی طور پر شہریوں کو سمندر کے راستے یونان اور دوسرے یورپی ملکوں تک پہنچانے کی سرگرمیوں میں ملوث رہے ہیں۔

انہی چاروں میں سے کسی نے ایلان کردی اور اس کے خاندان کو بھی یورپ لے جانے کا جھانسا دے کر کشتی میں سوار کیا اور کھلے سمندر میں لے جا کرانہیں بے یارو مدد گار چھوڑ دیا گیا۔ پولیس زیرحراست افراد سے تفتیش کررہی ہے۔تاہم اس کے نتائج سامنے نہیں آئے ہیں۔