.

"الخویا"، سعودی عرب کے شاہی پروٹوکول میزبان!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کسی بھی ملک کے سرکاری میزبانوں کی طرح سعودی عرب میں بھی منفرد شاہی میزبانوں کا ایک دستہ موجود ہے جو حکومتی دعوت پر آنے والے ملکی اور غیر ملکی مہمانوں کی خدمت بجا لانے کا فریضہ انجام دیتے ہیں۔ سعودی عرب کے ان شاہی میزبانوں کو عربی میں "الخویا" کہا جاتا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق "الخویا" شاہی میزبانوں کا پرانا نام ہے جو انہیں موجودہ سعودی مملکت کے بانی شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور میں دیا گیا۔ وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ ان کی ذمہ داریوں میں بھی اضافہ ہوا۔ سعودی عرب کے یہ شاہی میزبان مخصوص لباس زیب تن کرتے ہیں جس کے باعث انہیں دور ہی سے پہچان لیا جاتا ہے۔ سفید عربی لباس، سر پر رومال کے اوپر الغترہ اور نیام میں رکھی ایک تلوار ان کی پہچان ہے۔ سعودی عرب کے شاہی مہمان بننے والے عالمی رہ مائوں کی ملاقاتوں اور کانفرنسوں کے دوران شاہی میزبان مہمانوں کی آئو بھگت کرتے ہیں۔

حال ہی میں دارلحکومت ریاض میں عرب اور لاطینی امریکا کی چوٹی کانفرنس منعقد ہوئی جس میں مختلف ممالک کے سربراہان نے شرکت کی۔ کانفرنس کے شرکاء کا 100 "خوی" شاہی میزبانوں نے استقبال کیا۔

"الخویا" کی تشکیل 1925ء میں شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور میں ہوئی۔ شروع میں انہیں شاہی دیوان کے مہمان خانہ کے لیے مقرر کیا گیا تھا مگر بعد میں ان کی ذمہ داریوں میں کئی دوسرے کام بھی شامل کیے گئے۔ الخویا ایک مستقل شعبہ بن چکا جس میں مختلف اسکیل کے میزبان کام کرتے ہیں۔

"الخویا" کے سابق چیف ربیع ابن نحیت نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ شاہی میزبان سعودی عرب کی تمام ریاستوں کے شاہی مراکز میں موجود ہیں۔ یہ نام انہیں شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور میں دیا گیا تھا۔

ایک سوال کے جواب میں ابن نحیت نے بتایا کہ الخویا کے اہم کام شاہی مہمانوں کی دیکھ بحال، سعودی عرب میں ہونے والی اعلیٰ سطحی غیر ملکی کانفرنسوں کے موقع پر مہمانوں کی خدمت، ان کی سیکیورٹی اور استقبال بھی ان کی ذمہ داریوں میں شامل ہے۔

صرف یہی نہیں بلکہ الخویا سعودی عرب کے کسی گورنر کے نمائندے بھی بن سکتے ہیں۔ انہیں حکومت کی جانب سے کسی بھی تنازع کے حل کے لیے مصالحت کار بنایا جا سکتا ہے۔ وہ اسلحہ رکھ سکتے ہیں۔ کسی اہم شخصیت کی جانب سے دوسری شخصیت کو زبانی پیغام پہنچانا ہو الخویا راز دار پیغام رساں ہوتے ہیں۔ کسی شخص کو امیر ریاست [گورنر] کے سامنے پیش کرنا تو اس میں بھی یہ مدد کرتے ہیں۔

کسی بھی شاہی تقریب میں الخویا کی تعداد متعین نہیں ہوتی۔ کسی ریاست کی سطح پر غیرملکی نوعیت کی کانفرنسوں میں 11 الخویا شرف میزبانی حاصل کرتے ہیں۔ جب کہ شاہی دیوان میں جلوہ افروز ہونے والے مہمانوں کی خدمت پر 100 خوی بھی تعینات کیے جا سکے ہیں۔ کسی پروگرام میں خویوں کی تعداد کا انحصار تقریب کی نوعیت پر ہوتا ہے۔ تقریب جتنی بڑی ہوگی اتنے زیادہ خویا خدمات انجام دیں گے۔