.

تیل پر انحصار ختم کرنے کا دور آپہنچا: حاکم دبئی

’تیل کی برآمد سے چھٹکارے کا جشن جلد منائیں گے‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک ایسے وقت میں جب کہ عالمی منڈی میں تیل کی گرتی قیمتوں نے تیل پیدا کرنے والے ممالک کو پریشان کررکھا ہے، متحدہ عرب امارات کے نائب صدر اور حاکم دبئی نے پورے اعتماد کے ساتھ کہا ہے کہ ان کا ملک بتدریج تیل پر انحصار ختم کرنے کی پالیسی پرعمل پیرا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ وقت زیادہ دور نہیں جب ہم تیل کے آخری بیرل کی برآمد کا جشن منائیں گے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات کے نائب صدر الشیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے ’’ٹویٹر‘‘ پر پوسٹ ایک بیان میں کہا ہے کہ ان کا ملک تیل پرانحصار بتدریج کم کرنے کی پالیسی کے لیے پرعزم ہے۔ انہوں ںے کہا کہ جلد ہی ہم تیل کی برآمد ختم کرنے کا جشن منائیں گے۔ ہم تیل کے متبادل توانائی کے ذرائع پرکام کررہے ہیں۔ حاکم دبئی کا کہنا تھا کہ آنے والی نسلوں کے لیے بہترین معیشت کی خاطر متبادل توانائی کے ایک جامع قومی پلان جلد ترتیب دیں گے تاکہ مضبوط معیشت کو ایک نئے انداز میں آگے بڑھایا جائے۔

حاکم دبئی الشیخ محمد بن زاید نے کہا کہ متحدہ امارات نے معیشت کے لیے 70 فی صد تیل پرانحصار کم کردیا ہے۔ ہمارا ہدف ایک ایسی معیشت کی داغ بیل ڈالناہے جس کا تیل پرانحصار نہ ہو۔ اس سلسلے میں ہم نئے اقتصادی شعبوں کا اضافہ کررہے ہیں۔ موجودہ معاشی سیکٹرز کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کریں گے اور ایک ایسی نئی نسل تیار کریں گے جو متوازن اور دیر پا قومی معیشت کو آگے بڑھا سکے۔

خیال رہے کہ پچھلے ہفتے کا اختتام عالمی منڈی میں امریکی کروڈ آئل 30 ڈالر فی بیرل کی سطح پر ہوا۔ برنٹ کروڈ کی یہ 13 سال کی کم ترین قیمت ہے۔ آئندہ ماہ فروری میں مغربی ٹیکساس میں خام تیل فی بیرل 29.42 ڈالر کی قیمت کی تجویز ہے جو کہ موجودہ قیمت سے بھی 1.78 فی صد کم ہے۔ نیویارک میں رواں سال کے آغاز میں فی بیرل تیل کی قیمت میں 7.50 ڈالر کمی ریکارڈ کی گئی جو کہ کل کمی کا 21 فی صد ہے۔