.

ایرانی ٹی وی کا اعلی افسر خاتون نیوز کاسٹر پر فریفتہ ہو گیا

خاتون اہلکار کو جنسی تعلقات کے بدلے ترقی کے زینے طے کروانے کا وعدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انگریزی زبان میں نشریات پیش کرنے والے ایران کے سرکاری ٹی وی 'پریس ٹی وی' کی معروف خاتون نیوز کاسٹر شینا شیرانی نے چینل کے ڈائریکٹر نیوز حمید رضا عمادی پر جنسی ہراسیت کا الزام عاید کیا ہے۔ سوشل میڈیا پرشینا شیرانی اور حمید رضا عمادی کی مبینہ گفتگو کی آڈیو ریکارڈنگ کے کلپ بڑے پیمانے پر مقبول ہو رہے ہیں۔

ریکارڈ شدہ مکالمہ میں حمید رضا عمادی ، خاتون نیوز کاسٹر شینا شیرانی کوجنسی تعلقات کے بدلے ملازمت میں نمایاں ترقی دینے کا وعدہ کرتے سنے جا سکتے ہیں۔ یاد رہے کہ حمید رضا عمادی اور ایرانی ٹی وی اور ریڈیو اتھارٹی میں ان کے ہم عصر محمد سرافراز کانام 2012ء سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی پاداش میں بین الاقوامی پابندیوں کی فہرست میں شامل ہے۔

یورپی عدالت نے گذشتہ برس دسمبر میں متذکرہ دونوں ایرانی عہدیداروں نے نام سزا یافتہ افراد کی فہرست میں شامل رکھنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ ان پر الزام تھا کہ انہوں نے ایران کے خفیہ اداروں کے ساتھ مل کر سیاسی قیدیوں سے جبری اقبالی بیان لے کر جعلی رپورٹس تیار کیں۔
'روز' نامی ایرانی ویب پورٹل نے شینا اور حمید رضا عمادی کے درمیان مکالمہ کی مکمل ریکارڈنگ نشر کی ہے۔ تاہم اس پورٹل پر صوتی مکالمے کے اجرا سے پہلے شینا شیرانی ایران سے نکل چکی تھیں۔

اس واقعے پر تبصرہ کرتے ہوئے سوشل میڈیا پر میں اس رائے کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ اس ہائی پروفائل مثال سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ ایران کے سرکاری اداروں میں کام کرنے والی خواتین کو کس نوعیت کی جنسی ہراسیت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔