.

اب کمپیوٹر سکرین کلائی پر باندھی جا سکے گی!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مستقبل یا خیالی دنیا کا حال پیش کرنے والی کئی فلموں میں اڑنے والی گاڑیاں، سیاروں کے درمیان سفر اور کاغذ کے سے پتلی سکرین پر کمپیوٹر استعمال کے مناظر سے تو سب ہی آشنا ہیں۔ اڑنے والی گاڑیوں اور سیاروں کے درمیان سفر کا تو پتا نہیں مگر ایک امریکی کمپنی نے کاغذ جیسی پتلی سکرین بنا دی ہے جس کو کلائی پر گھڑی کی طرح پہننا ممکن ہو گیاہے۔

امریکی کمپنی "FlexEnable" کی جانب سے بنایا جانے والا یہ سکرین بریسلٹ انتہائی لچک دار ہے اور اسے اپنی مرضی سے مطلوبہ زاویے تک موڑا جاسکتا ہے۔ اس بریسلٹ میں ایک "LCD" بھی نصب ہے جس پر مطلوبہ ڈیٹا دیکھا جا سکتا ہے ۔

یہ کمپنی ایسی ہی مصنوعات کے بارے میں تحقیق میں معروف ہے۔ العربیہ ٹی وی کے فلیگ شپ پروگرام 'شی ٹک' میں میزبان سلطان بیتاوی نے اس ٹکنالوجی کا تعارف کرواتے ہوئے کہا کہ یہ بریسلٹ کسی بھی LCD کی طرح کام کرتا ہے اور اس میں ایک حصے میں مائع مواد ہوتا ہے جبکہ ایک پرزے سے اس کے پیچھے لائٹ جلائی جاتی ہے۔ جس کے نتیجے میں آپ کو اپنی مطلوبہ ڈیٹا اور متحرک تصویر نظر آتی ہے۔

یہ منفرد ایجاد کی نمائش سپین کے شہر بارسلونا میں حال ہی میں کی گئی ہے۔ اس سکرین کا یہ نمونہ ابھی تحقیق کے مراحل میں ہے اور اس ایجاد فائنل ورژن نہیں ہے مگر اس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ مستقبل میں ایسے آلات کے ذریعے سے زندگی میں کتنی آسانی آسکتی ہے۔

اس کے علاوہ ایک اور ٹکنالوجی جو اس نمائش میں سامنے آئی ہے وہ ایک پلاسٹک کے حصے پر سنسرز یا پراسیسرز کی موجودگی ہے۔ پانی کی بوتلوں کی پلاسٹک سے تیار شدہ اس پرزے پر لاکھوں کی تعداد میں ٹرانزسٹر چھاپے گئے ہیں۔