.

پھل، سبزیاں کھانے سے مسرت کا احساس یقینی بن سکتا ہے: تحقیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

محققین کا کہنا ہے کہ ڈاکٹروں کی جانب سے ہمیشہ پھلوں اور سبزیوں کو زیادہ کھانے کی ہدایت کا تعلق اکثر طویل مدت میں طبی فوائد سے متعلق ہوتا ہے۔ تاہم ان غذاؤں کا مسلسل استعمال قصیر مدت میں بھی مورال کو بہتر بنا سکتا ہے۔

مذکورہ تحقیق کی ٹیم نے روزانہ پھلوں اور سبزیوں کے کثرت سے کھانے کو مسرت کے احساس میں اضافے سے مربوط کرنے کے لیے آسٹریلیا میں دو برس تک کیے جانے والے مقامی سروے کی رپورٹوں کو بنیاد بنایا۔

محققین کا کہنا ہے کہ روزانہ پھلوں اور سبزیوں کے آٹھ دانے کھانے سے انسانی مورال اس سطح تک بڑھ گیا جو انسان کو ملازمت حاصل کرنے کے بعد محسوس ہونے والی خوشی یا مسرت کے برابر ہے۔

برطانیہ میں University of Warwick کے پروفیسر اینڈریو اوسویلڈ جو اس طبی تحقیق میں شامل تھے ، ان کا کہنا ہے کہ "میں نے واضح طور پر پھلوں اور سبزیوں کی انتہائی حیرت انگیز تاثیر دیکھی"۔

اس تحقیق کے دوران محققین نے آسٹریلیا میں 12000 سے زیادہ افراد سے متعلق معلومات کا تجزیہ کیا۔

تحقیق میں شریک افراد نے 2007 اور 2013 کے درمیان اپنی غذائی عادات کا اندراج کرایا اور اپنی زندگی ، ذہنی صحت اور مورال سے متعلق سروے میں شامل سوالات کے جواب دیے۔

طبی تحقیق کی ٹیم اس خلاصے تک پہنچی کہ وہ شرکاء جنہوں نے روزانہ کوئی پھل یا سبزی نہ کھانے کی عادت کو بدل کر روزانہ آٹھ عدد تک پہنچا دیا، وہ اپنی غذا میں کوئی پھل یا سبزی شامل نہ کرنے والوں کے مقابلے میں زیادہ مسرور اور زیادہ مطمئن پائے گئے۔

جن لوگوں نے پھل اور سبزیاں کھانے کو روزانہ صفر سے بڑھا کر آٹھ تک پہنچا دیا، ان میں پائے جانے والے زندگی کے اطمینان کی سطح اس مسرت کے برابر تھی جو انسان کو نئی ملازمت حاصل کرنے پر محسوس ہوتی ہے۔

اس کے مقابل جن لوگوں نے اپنی روزانہ کی غذا میں مزید پھلوں اور سبزیوں کا اضافہ ہر گز نہیں کیا، ان میں اس عرصے کے دوران مسرت کے پیمانے میں واقع ہونے والی کمی اس سطح کے برابر تھی جو انسان کے ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھنے کی صورت میں سامنے آتی ہے۔