ایران : ''اخلاقی بگاڑ'' کا سبب ایک لاکھ سیٹلائٹ ڈشیں تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایران میں اخلاقیات کے بگاڑ کا سبب بننے والے غیر قانونی برقی آلات کے خلاف مہم کے تحت دس لاکھ سیٹلائٹ ڈشوں اور رسیورز کو تباہ کردیا گیا ہے۔

ان ڈشوں کو دارالحکومت تہران میں منعقدہ ایک تقریب میں تباہ کیا گیا ہے۔اس موقع پر ایران کی باسیج ملیشیا کے سربراہ جنرل محمد رضا نغدی بھی موجود تھے۔انھوں نے اپنے قدامت پرست ملک میں سیٹلائٹ ٹیلی ویژن کے اثرات کے حوالے سے خبردار کیا ہے۔

باسیج نیوز کے مطابق انھوں نے کہا: ''سچ تو یہ ہے کہ بیشتر سیٹلائٹ چینلز معاشرے کے اخلاق اور ثقافت کو بگاڑنے کا موجب بن رہے ہیں۔یہ ٹیلی ویژن چینلز اپنے جن مقاصد کے حصول میں کامیاب رہے ہیں،وہ یہ کہ طلاق کی شرح میں اضافہ ہوگیا ہے۔منشیات کے عادی افراد کی تعداد بڑھ گئی ہے اور معاشرے میں عدم تحفظ پیدا ہوا ہے''۔

جنرل نغدی نے بتایا کہ ''دس لاکھ ایرانیوں نے پہلے ہی رضاکارانہ طور پر اپنے سیٹلائٹ کے آلات کو حکام کے حوالے کردیا ہے''۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ''ان چینلوں میں سے زیادہ تر نہ صرف خاندانوں کی بنیاد کو کمزور کررہے ہیں بلکہ بچوں کی تعلیم میں بھی خلل انداز ہورہے ہیں اور جو بچے سیٹلائٹ چینلوں کی نشریات کے زیراثر ہوتے ہیں ،ان کا کردار بھی مناسب نہیں ہوتا ہے''۔

ایرانی قانون کے تحت سیٹلائٹ آلات کی فروخت اور ان کے استعمال پر پابندی ہے۔جو کوئی بھی انھیں تقسیم ،استعمال یا مرمت کرنے کا قصور وار ٹھہرے،اس پر 2800 ڈالرز تک جرمانہ عاید کیا جاسکتا ہے۔ایرانی پولیس شہری آبادیوں میں باقاعدگی سے چھاپا مار کارروائیاں کرتی اور چھتوں سے ڈشوں کو ضبط کرتی رہتی ہے۔

ایران کے وزیر ثقافت علی جنتی نے جمعے کے روز ایک بیان میں اس قانون پر نظرثانی کا عندیہ دیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ اس قانون میں اصلاحات کی اشد ضرورت ہے کیونکہ سیٹلائٹ کے استعمال پر سخت پابندی عاید ہے لیکن بیشتر لوگ اس کو استعمال کرتے ہیں۔اس کا یہ مطلب ہے کہ 70 فی صد ایرانی سیٹلائٹ ڈشیں رکھ کر قانون کی خلاف ورزی کے مرتکب ہورہے ہیں۔

جنرل نغدی نے وزیر جنتی کو ان کے اس بیان پر آڑے ہاتھوں لیا ہے اور ان کا نام لیے بغیر کہا ہے کہ ''جو لوگ ثقافتی امور کے انچارج ہیں ،انھیں اپنے لوگوں کے بارے میں سچا ہونا چاہیے نہ کہ وہ ایسی راہ اختیار کریں جس سے انھیں ممنون کیا جاسکے''۔

واضح رہے کہ ایران میں بہت سے غیرملکی سیٹلائٹ چینلز فارسی میں اپنی نشریات پیش کرتے ہیں۔یہ زیادہ تر خبریں ،فلمیں ،تفریحی پروگرام اور ڈرامے دکھاتے ہیں۔ایرانی قدامت پسند باقاعدگی سے ان چینلوں کی مذمت کرتے رہتے ہیں اور ان کی نشریات کو ایرانی ثقافت اور اسلامی اقدار کو مسخ کرنے کی کوشش قرار دیتے ہیں۔

ایران کے اعتدال پسند صدر حسن روحانی متعدد مرتبہ یہ بات کہہ چکے ہیں کہ سیٹلائٹ ڈشوں پر پابندی غیر ضروری ہے اور اس کے منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں