.

ہمہ وقت چوکس مصر کی پہلی خاتون باڈی گارڈ سے ملیے!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں ایک خاتون نے باڈی بلڈنگ ٹرینر کے طور پر اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوا لیا ہے اور اس کے بعد سے ان کی بہت مانگ ہے۔ملک میں یہ پہلا موقع ہے کہ سرکاری شخصیات ،فن کار اور وی آئی پی شخصیات بطور محافظہ ان کی خدمات حاصل کررہی ہیں۔

اس خاتون کا نام ہند وجیہ ہے۔ان کی عمر یہی کوئی پچیس تیس سال کے درمیان ہوگی۔وہ کراٹے ،کنگ فو اور اکیڈو کی ماہر ہیں اور فٹ بال کی دفاعی کھلاڑی ہیں۔ انھوں نے ایک فزیکل ایجوکیشن کالج سے فزیو تھراپی میں گریجوایشن کی ڈگری حاصل کی تھی۔

العربیہ نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے انھوں نے بتایا ہے کہ انھوں نے چودہ سال کی عمر میں کراٹے کی پریکٹس شروع کردی تھی۔پھر انھوں نے مصر کی کراٹے چیمپئن شپ میں حصہ لیا اور ٹائٹل جیتا تھا۔بعد میں انھوں نے کنگ فو ،جیٹ کونے ڈو ،موئے تھائی اور اکیڈو کی بھی تربیت حاصل کی تھی اور فٹ بال کھیلنا شروع کردیا تھا۔وہ خواتین کے ایک فٹ بال کلب کی طرف سے دفاعی کھلاڑی کے طور پر کھیلتی رہی ہیں۔

وجیہ اب سے کچھ عرصہ قبل گولڈی کلب کی فٹ بال ٹیم کے ساتھ ٹرینر کے طور پر بھی کام کرتی رہی ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ اب وہ عملاً باڈی بلڈنگ ہی کی ہو کررہ گئی ہیں۔انھوں نے بتایا کہ باڈی بلڈنگ میں مہارت کے بعد انھوں نے ایک کمپنی سے بھی ذاتی محافظہ بننے کی تربیت حاصل کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ابتدا میں بہت سے جیم کلبوں نے ان کی صنف کی وجہ سے ٹرینر کے طور پر ان کی خدمات لینے سے انکار کردیا تھا۔اس لیے وہ وزن گھٹانے اور جسمانی لحاظ سے فٹ رہنے کی خواہاں خواتین کو تربیت دینے کا کام کرتی رہی تھیں۔

گوناگوں خوبیوں اور صلاحیتوں کی مالک اس مصری ایتھلیٹ کی مصروفیات بھی مختلف النوع ہیں۔اس وقت وہ سرکاری شخصیات کے ساتھ اور آرٹسٹوں کے کنسرٹس کے موقع پر محافظ کے طور پر کام کررہی ہیں۔اس کے علاوہ ایک جرمن ادارے سے ایک کورس بھی کررہی ہیں۔اس کے بعد وہ سفیروں اور غیرملکی سفارت کاروں کے ساتھ بھی محافظہ کے طور پر کام کرسکیں گی۔

وجیہ کا کہنا تھا کہ باڈی گارڈ کے طور پر کام کرنے کے لیے آدمی کو جسمانی لحاظ سے مکمل طور پر فٹ ہونا چاہیے کیونکہ ہمہ وقت چوکس اور چاق چوبند رہنا پڑتا ہے اور معمولی سے معمولی بات پر بھی اپنی توجہ مرکوز کرنا پڑتی ہے۔