.

زیتون کا تیل دل کے مریضوں کے لیے کولسٹرول کی دواؤں سے بہتر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک نئے طبی مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ دل کے مریضوں کے لیے زیتون کا تیل کولسٹرول کی دواؤں سے زیادہ مفید ہے۔ معالجین ان دواؤں کو مریضوں کے لیے ایک مؤثر علاج قرار دیتے ہیں۔ واضح رہے کہ دیگر تمام اقسام کے تیلوں کو دل کے مریضوں اور خون میں کولسٹرول کی بلند سطح سے دوچار افراد کے لیے سخت مضر قرار دیا جاتا ہے۔

برطانوی اخبار " دی ٹائمز" میں شائع ہونے والے اس اطالوی تحقیقی مطالعے کے مطابق مشرق وسطی کے لوگوں کے غذائی نظام میں زیتول کے تیل کی بڑی مقدار شامل ہوتی ہے لہذا یہ غذائی نظام دل کے دوروں سے جلد وفات کے امکان کو.. اُن لوگوں کے مقابلے میں 37% تک کم کر دیتا ہے جو سرخ گوشت اور مکھن کو اپنے غذائی نظام کی بنیاد بناتے ہیں۔

یہ بات پہلے ہی معروف ہے کہ مچھلی ، سبزیاں اور پھل کھانے سے دل کے امراض میں مبتلا ہونے کے امکانات کم ہوجاتے ہیں۔ تاہم اطالوی مطالعے میں نئی بات زیتون کے تیل سے متعلق ہے جیسا کہ پہلی مرتبہ ظاہر ہوا ہے کہ یہ دل کے مریضوں اور خون میں کولسٹرول کی زیادہ مقدار سے دوچار افراد کے لیے مفید ہے۔ اس کے علاوہ مطالعے سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ زیتون دل کے مرض میں مبتلا ہونے سے حفاظت کرتا ہے۔

مطالعے کے نگراں محقق کا کہنا ہے کہ "مطالعے میں عمومی طور سے عام لوگوں پر توجہ مرکوز کی گئی جن میں اکثریت صحت مند افراد کی تھی۔ اس امر پر کڑی نظر رکھی گئی کہ دل اور شریانوں کے مریضوں کے ساتھ کیا ہو رہا ہے"۔

محققین نے دل کے دوروں ، فالج اور خون کی شریانوں کی بندش سے متاثر 1200 حالتوں کا مطالعہ کیا۔ تقریبا 7 برس جاری رہنے والے تحقیقی مطالعے کے دوران 208 افراد فوت ہوئے۔