.

''آپ اسرائیل نہیں، فلسطینی علاقوں میں جا رہے ہیں''

چینی ائیرلائنز کے نقشے نے لاشعوری طور پر''تاریخی حقیقت'' آشکارا کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

چین کی ایک فضائی کمپنی نے اپنے ملٹی میڈیا سسٹم میں اسرائیل کا نام ''فلسطینی علاقوں'' سے تبدیل کردیا ہے۔

چینی فضائی کمپنی حینان کی ایک پرواز کے ذریعے بیجنگ سے تل ابیب جانے والے اسرائیلی مسافروں کو اپنے ملک کا نام نظر نہیں آیا تو انھوں نے اس جانب توجہ دلائی ہے۔

منگل کے روز بن گورین ہوائی اڈے پر اترنے والے اس طیارے کی سکرینوں پر شام ،قبرص اور لبنان کے نام واضح طور پر نظر آرہے تھے مگر اس نقشے پر صرف تل ابیب اور یروشیلم (مقبوضہ بیت المقدس) کے نام تھے لیکن اسرائیل کا لفظ حذف کردیا گیا تھا۔

مسافروں نے جب حینان ائیرلائنز سے اس معاملے کی شکایات کیں تو اس نے ان کے جواب میں اس قابل افسوس فنی غلطی کی جانب توجہ مبذول کرانے پر ان کا شکریہ ادا کیا ہے۔اس کا کہنا ہے:'' فضائی کمپنی نقشوں پر اس غلطی کو جلد سے جلد درست کرنے کے لیے بیرونی سوفٹ وئیر مہیا کنندہ کے ساتھ مل کر کام کررہی ہے''۔

گذشتہ چند ماہ کے دوران اسرائیلی مسافروں کے ساتھ غیرملکی فضائی کمپنیوں کے طیاروں پر سفر کے دوران اس طرح کا یہ تیسرا واقعہ پیش آیا ہے اور فضائی کمپنی نے اپنے مسافروں کو اسرائیل کو نظرانداز کرتے ہوئے فلسطین بھیجنے کی اطلاع دی تھی۔

اگست کے آخر میں متعدد اسرائیلی مسافروں نے محض اس بنا پر ائیرسربیا کی بلغراد سے تل ابیب کے لیے روانہ ہونے والی پرواز پر اس اعلان کے بعد سوار ہونے سے انکار کردیا تھا کہ اس جائے منزل ''فلسطین'' تھی۔اس موقع پر ائیر سربیا کے نمائندے کی وضاحت سے صورت حال مزید دلچسپ ہو گئی تھی کیونکہ ان صاحب نے یہ اعلان کیا تھا کہ ''یہ پرواز تل ابیب جارہی ہے،اسرائیل نہیں''۔اس پر اسرائیلی مسافر مزید ہکا بکا رہ گئے تھے۔